محدث العصر، الداعیۃ الکبیر الشیخ محمد سرفراز صفدر رحمہ اللہ

مولانا طارق جمیل

بسم اللہ الرحمن الرحیم۔ الحمد للہ الذی کتب الآثار ونسخ الآجال، القلوب لہ مفضیۃ والسر عندہ علانیۃ والحلال ما احل والحرام ما حرم والدین ما شرع والامر ما قضی والخلق خلقہ والعبد عبدہ وھو اللہ الرء وف الرحیم وھو الذی رفع العلماء الی اشرف المناصب ونشر فی الاقالیم اعلامہم واجری بالحکم اقلامہم وجعلھم فی الدنیا کالاعلام وہداۃ للانام۔ 

والصلوۃ والسلام علی من خصہ باجتباۂ واصطفاۂ وسماہ من اسمین من اسماۂ رء وفا ورحیما فمن تمسک بشریعتہ نال فضلا جسیما وحاز فی الجنۃ نضرۃ ونعیما۔ 

وعلی آلہ وصحبہ الذین انتقلوا ببرکۃ رسالتہ ویمن سفارتہ الی حال الاولیاء وسجایا العلماء فصاروا اعمق الناس علما وابرہم قلوبا واقلہم تکفا واصدقہم لہجۃ وبعد:

فان قلمی بین اناملی وانا معترف کل الاعتراف بقلۃ البضاعۃ العلمیۃ بل بعدمہا وکانی اسود بیاض الصفحۃ واضیع وقت القاری بجزاف القول واشغلہ عن اکتساب المعروف وغرس المالوف بثرثراتی وہندساتی لاسیما اذا کان الکلام عن شخصیۃ تنورت بعلمہا البلاد واقرت بفضلھا العباد وعن عالم دان لعلو کعبہ فی المنقول والمعقول کل صدیق وعدو وکل حاسد وغابط وکل دان وقاص ولقد کنت اعد ہذاہ الجراۃ والجسارۃ من الوقاحۃ وسوء الادب لو لم یامرنی بذالک السید الکبیر العالم النحریر من بکمال علمہ وجمال عملہ اعترف الثقلان وطار بذکر اعتدالہ الحدثان وفاح بنفحات لسانہ کل مکان المدعو بالعلامۃ زاہد الراشدی وھوالعالم لا اجتاز بیانہ حد الاعتدال ولا سل قلمہ عن غمد الاقتصاد والانصاف حتی نری خصمہ یقر بذالک ویلھج بنصفتہ فی تصنیفہ وتالیفہ ومہما یکن المجال من التحسین اوالتنقیح او الرد او النقد تجد قلمہ منزھا من درن الافراط والتفریط منقحا من رائحۃ السب والشتم مجانبا من مرتع الطعن والتشنیع سائرا علی سواء السبیل ماضیا علی النھج السلیم۔ 

فارجع الحین الیٰ صلب المقال قائلا انہ وطئت الھند اقدام الافرنج وھم فی ازیاء التجار الشاطرین سنۃ ۱۶۰۰ للمیلاد فصاروا فی امد قریب متنمرین و متفرعنین بمؤامرتھم ودسائسھم وبغفلۃ اھل الھند و بتالب بعضھم علی بعض وتکالب کل طامع وطالع علی الحکومۃ فبدات الامارات الصغیرۃ تجثو امام الا فرنج وبحثوا عن الخائنین والغادرین فظفروا بما ارادوا، فتم لھم الامر والقبض فی بدایۃ المطاف بسقوط بنغال وفی النھایۃ بفشل حرب الحریۃ (جنک آزادی) ضد انکلیز ۱۸۵۷ للمیلاد فغربت شمس سیایۃ المسلمین فجثم اللیل الالیل من الظلم والجور ومن الضراوۃ والشقاوۃ ناشرا اجنحتہ السوداء علی الھند باجمعھا۔

فی مثل ھذہ الظرو ف الحالکۃ کان المسلمون فی شدۃ الحاجۃ الی بنیان مرصوص لسد ھذا السیل الجارف الغربی من الکفر والزندقۃ والی من ینحی سفینۃ الاقدار الاسلامیۃ من تیارات العواصف الاوربیۃ وکان بصیص الرجاء یقطع حبلہ وشمعۃ الامل تلفظ انفاسھا الاخیرۃ ولقد جرت سنۃ الاندلس لولابرھان ربنا...

انظروا ایھا السادۃ فی ھذہ الخطوب الھائلۃ ... رجلان مدرس ودارس، معلم ومتعلم، محمود ومحمود، تحت شجرۃ الرمان وقد تعاھدا...وتعاقدا...وتوافقا...

ولم تلبث ان تطورت ھذہ المدرسۃ دارالعلوم بدیو بند علی قدم وساق ولما لم تتطور وقد غرسھا وثقفھا مولانا قاسم النانوتوی شیخ المعقولات والمنقولات ومن الیہ انتھت ریاسۃ العلوم والفنون آنذاک وکانت فرائص الھندوس وبطارقۃ النصاری ترتعش من اسمہ وکیف لا وقد احتضنھا مرجع التصوف والسلوک ابو حنیفۃ فی زمانہ الشیخ رشید احمد الکنکوھی۔

فھا شجرۃ الامل شرعت تثمر وبرکاتھا تمطر وباتت ھذہ المدرسۃ فی صرف الغارات الغربیۃ حصنا منیعا حدیدیا لا تزعزع بنیانہ ولا تدحرج ارکانہ ودوحۃ عظیمۃ فی وجہ صرصر عاتیۃ اللادینیۃ ولم یضن الافرنج بآخر عیدان تدبیرھم فی تحطیم کیانھا ولکن ’’یریدون ان یطفؤا نوراللہ بافواھہم واللہ متم نورہ ولو کرہ الکافرون‘‘

فی حجر دارالعلوم ترعرعت الابطال والامجاد ونشات فی کنفھا الافاضل والسادات الذین قطعوا امانی العدو بسیف العلم والعمل ... ھا ھو الشیخ حکیم الامۃ اشرف علی التھانوی علی صعید التزکیۃ والتربیۃ حتی بلغ بالامۃ ذراھا وزکی نفوسھا وطھر قلوبھا،

ھذا ھو الشیخ عطاء اللہ الشاہ البخاری قائم علی رصیف ختم النبوۃ وحریمھا والصاعقۃ علی القادیانیۃ، وفی ناحیۃ اخری حامل لواء الجھاد فارس شاھر حسامہ فی مطاردۃ انکلیز ویضرب اعناقھم ویقطع منھم کل بنان الشیخ حسین احمد المدنی، وفی مضمارالحدیث انور الشاہ الکاشمیری الذی جدد ذکری المحدثین الاوائل وکان مکتبۃ ناطقۃ، وامیر موکب الدعوۃ والتبلیغ الداعیۃ الکبیر مولانا محمد الیاس الکاندھلوی، ادی الامانۃ وبلغ الرسالۃ المحمدیۃ، وورد موردھا المفکر العظیم الداعی الی الاتحاد العالم الاسلامی ابو الحسن علی الندوی، وقد منح مفتاح الکعبۃ تقدیرا لمآثرہ العلمیۃ وتثمینا لبطولاتہ الاسلامیۃ العالمیۃ۔ کل لعب دورہ الھام وحقا اقول: لو شرعت فی سرد قصصھم ومفاخرھم لطال الکلا م ولضاق المقام فواللہ انھا لبحر زخار منہ تستقی وتمتلئ سحاب العلم والعمل سحاب حاملات ثقال ثم لا تدع سھلا ولا حزنا الا وتھطل فیہ مطرا غزیرا...

نعم وقد ارتفعت من ھذا البحر العظیم من دارالعلوم سحابۃ ملیءۃ علما وفھما واتجھت قبل باکستان (قبل الانقسام) فسقت تربتھا وروت غلیلھا وشفت علیلھا، الا وھو الشیخ المفسر المحدث الکبیر العالم المتبحر الناقد البصیر مولانا محمد سر فراز خان الصفدر رحمہ اللہ رحمۃ واسعۃ۔

عاد ھو ببقعۃ مسماۃ بغکر مندی ینبوعا لا ینضب ماؤہ ولا یکدر صفوہ وبستانا عدیم المثال وقدوۃ لبقیۃ الا جیال فورد ہذا المعین العذب الوف بل مئات الالوف من عطاش العلوم فنھلوا منہ وتعللوا۔

فان کنت تود ان تقتبس من حیاتہ لحیاتک فامعن النظر فیہ وتعلم من طلبہ للعلم۔ تجد انہ یطوف فی الامصار ویجول فی الاقطار ویقطع الاسفار لفھم الاسفار ثلاث عشرۃ سنۃ متتالیۃ داخل باکستان (قبل الانقسام) ثم سافر وقطع الفیافی والقی عصا ترحالہ بدارالعلوم دیوبند وبل صداہ من العلوم العالیۃ بضع سنین ثم قفل عائدا الی وطنہ وطفق یفیض نصف القرآن او اکثر بما تضلع من علوم وفنون،

وان کنت تبغی الاطلاع علی لباقتہ فانہ قد اتخذ مکانا علیا فی عیون الاساتذۃ ولقبہ استاذہ شیخ العرب والعجم مولانا حسین احمد المدنی بصفدر یعنی المفرق بین الحق والباطل۔ وناھیک عن قوۃ ذاکرتہ ابناۂ یحدثون اننا کلما اعیانا استشہاد لمسئلۃ واضنانا بحث فی مصدر سالناہ فیسرد لنا المراجع مع تحدید اسماء الکتب ورقم الصفحۃ فنجد کماذکرہ۔ وانہ واللہ فارس لحلبۃ التدریس والتعلیم، قضی جل حیاتہ فی تعلیم القرآن وتدریس الحدیث فحلی خلقا کثیرا برسوخ علمہ واخلاص عملہ۔ 

وان تعجب من السیف وہزتہ فانظر الی سیف القلم الذی قمع بہ اعداء الاسلام وتصدی بہ المبتدعین والمنحرفین فالف مقالات لا باس بہا وصنف اکثر من خمسین کتابا ضخما واستاصل بھذا السیف المسلول جذور البدعات والرسومات۔

مصنفاتہ شہب ثاقبہ علی الفرق الباطلۃ والمبتدعۃ واللادینیۃ فاتحف العالم متاحف لاتبلی وکنوزا لاتفنی بکر الایام ومر الزمان، واحسن الکلام ووضح المرام واتم البرہان بذخیرۃ الجنان فی فہم القرآن فاسکن الصدور وافرح الخواطر بعبارات الاکابر۔

وکان یتبع الحق ویصدع بہ ویقول کلمۃ حق ولایخاف فیہا لومۃ لائم وان اودتہ الی المنشور او اوصلتہ الی المحفور۔

وکما کان ابا رحیما لطلاب المدارس الدینیۃ، ہکذا کان اخا شفیقا علی دارسی المدارسی العصریۃ وقد تولی تدریس المعلمین فیہا سنین طوالا۔

وکان آیۃ فی التواضع ومثلا فی المواظبۃ والمثابرۃ وصبورا علی الشدائد والنوازل حتی فی مرض الوفاۃ قد صحبہ المرض ثمانی سنوات فاحسن صحبتہ من غیر جزع ولا فزع وقد تجاوز تسعین من عمرہ فنال بہ اجر وشرف الحدیث القدسی حیث یقول اللہ جل وعلا یبشر عبادہ: ’’اذا بلغ عبدی اربعین سنۃ عافیتہ من البلایا الثلاث: من الجنون والجذام والبرص، فاذا بلغ خمسین سنۃ حاسبتہ حسابا یسیرا، فاذا بلغ ستین سنۃ احببت الیہ الانابۃ، فاذا بلغ سبعین سنۃ احبتہ الملائکۃ، فاذا بلغ ثمانین سنۃ کتبت حسناتہ والقیت سیئاتہ، فاذا بلغ تسعین سنۃ قالت الملائکۃ اسیر اللہ فی ارضہ وغفرلہ ما تقدم من ذنبہ وما تاخر وشفع فی اہلہ‘‘ ( جا مع الاحادیث القدسیۃ وکذا نحوہ فی مسند ابی یعلی الموصلی)

ثم لبی نداء ربہ فی التاسع خلت من جمادی الاولی سنۃ ۱۴۳۰ للہجرۃ یوم الثلاثاء الموافق الخامس من مایو سنۃ ۲۰۰۹ للمیلاد۔ انا للہ وانا الیہ راجعون۔ تقبل اللہ حسناتہ وغفر سیئاتہ وتغمد الفقید بواسع رحمتہ واسکنہ فسیح جناتہ والہم اہلہ وذویہ الصبر والسلوان، وجزاہ اللہ عنا وعن المسلمین خیرا وسیفتخر بہ دارالعلوم الی ابد الآبدین وتجنی من ثمراتہ ہذہ الامۃ الی دھر الداہرین۔ 

مشاہدات و تاثرات

جولائی تا ستمبر ۲۰۰۹ء

جلد ۲۰ ۔ شمارہ ۷ تا ۱۰

گر قبول افتد زہے عز و شرف
محمد عمار خان ناصر

ہم نے تمام عمر گزاری ہے اس طرح (۱)
مولانا محمد سرفراز خان صفدرؒ

ہم نے تمام عمر گزاری ہے اس طرح (۲)
مولانا محمد سرفراز خان صفدرؒ

حضرت شیخ الحدیثؒ کے اساتذہ کا اجمالی تعارف
مولانا محمد یوسف

امام اہل سنتؒ کے چند اساتذہ کا تذکرہ
مولانا قاضی نثار احمد

گکھڑ میں امام اہل سنت کے معمولات و مصروفیات
قاری حماد الزہراوی

امام اہل سنت رحمۃ اللہ علیہ کا تدریسی ذوق اور خدمات
مولانا عبد القدوس خان قارن

امام اہل سنت رحمہ اللہ کی قرآنی خدمات اور تفسیری ذوق
مولانا محمد یوسف

امام اہل سنت رحمہ اللہ کی تصانیف: ایک اجمالی تعارف
مولانا عبد الحق خان بشیر

امام اہل سنتؒ کی تصانیف اکابر علما کی نظر میں
حافظ عبد الرشید

حضرت شیخ الحدیث رحمہ اللہ اور دفاعِ حدیث
پروفیسر ڈاکٹر محمد اکرم ورک

منکرینِ حدیث کے شبہات کے جواب میں مولانا صفدر رحمہ اللہ کا اسلوبِ استدلال
ڈاکٹر محمد عبد اللہ صالح

’’مقام ابی حنیفہ‘‘ ۔ ایک علمی و تاریخی دستاویز
ڈاکٹر انوار احمد اعجاز

’’عیسائیت کا پس منظر‘‘ ۔ ایک مطالعہ
ڈاکٹر خواجہ حامد بن جمیل

حضرت شیخ الحدیث رحمہ اللہ کی تصانیف میں تصوف و سلوک کے بعض مباحث
حافظ محمد سلیمان

سنت اور بدعت ’’راہ سنت‘‘ کی روشنی میں
پروفیسر عبد الواحد سجاد

مولانا محمد سرفراز خان صفدر رحمہ اللہ کا انداز تحقیق
ڈاکٹر محفوظ احمد

مولانا محمد سرفراز خان صفدر کا اسلوب تحریر
نوید الحسن

امام اہل سنت رحمہ اللہ کا شعری ذوق
مولانا مومن خان عثمانی

حضرت والد محترمؒ سے وابستہ چند یادیں
مولانا ابوعمار زاہد الراشدی

شمع روشن بجھ گئی بزم سخن ماتم میں ہے
قاضی محمد رویس خان ایوبی

والد محترم کے ساتھ ایک ماہ جیل میں
مولانا عبد الحق خان بشیر

پیکر علم و تقویٰ
مولانا شیخ رشید الحق خان عابد

دو مثالی بھائی
مولانا حاجی محمد فیاض خان سواتی

حضرت والد محترمؒ کے آخری ایام
مولانا عزیز الرحمٰن خان شاہد

میرے بابا جان
ام عمران شہید

ذَہَبَ الَّذِیْنَ یُعَاشُ فِیْ اَکْنَافِہِمْ
اہلیہ قاری خبیب

اب جن کے دیکھنے کو اکھیاں ترستیاں ہیں
ام عمار راشدی

ابا جیؒ اور صوفی صاحبؒ ۔ شخصیت اور فکر و مزاج کے چند نمایاں نقوش
محمد عمار خان ناصر

قبولیت کا مقام
مولانا محمد عرباض خان سواتی

جامع الصفات شخصیت
مولانا قاری محمد ابوبکر صدیق

ایک استاد کے دو شاگرد
حافظ ممتاز الحسن خدامی

داداجان رحمہ اللہ ۔ چند یادیں، چند باتیں
حافظ سرفراز حسن خان حمزہ

کچھ یادیں، کچھ باتیں
حافظ محمد علم الدین خان ابوہریرہ

اٹھا سائبان شفقت
حافظ شمس الدین خان طلحہ

ملنے کے نہیں نایاب ہیں ہم
ام عفان خان

نانا جان علیہ الرحمہ کی چند یادیں
ام ریان ظہیر

میرے دادا جی رحمۃ اللہ علیہ
ام حذیفہ خان سواتی

میرے شفیق نانا جان
ام عدی خان سواتی

وہ سب ہیں چل بسے جنہیں عادت تھی مسکرانے کی
بنت قاری خبیب احمد عمر

بھولے گا نہیں ہم کو کبھی ان کا بچھڑنا
بنت حافظ محمد شفیق (۱)

دل سے نزدیک آنکھوں سے اوجھل
اخت داؤد نوید

مرنے والے مرتے ہیں لیکن فنا ہوتے نہیں
بنت حافظ محمد شفیق (۲)

شیخ الکل حضرت مولانا سرفراز صاحب صفدرؒ
مولانا مفتی محمد تقی عثمانی

نہ حسنش غایتے دارد نہ سعدی را سخن پایاں
مولانا مفتی محمد عیسی گورمانی

امام اہل سنت کی رحلت
مولانا محمد عیسٰی منصوری

امام اہلِ سنتؒ کے غیر معمولی اوصاف و کمالات
مولانا سعید احمد جلالپوری

حضرت مولانا محمد سرفراز خاں صفدرؒ کا سانحۂ ارتحال
مولانا مفتی محمد زاہد

علم و عمل کے سرفراز
مولانا سید عطاء المہیمن بخاری

اک شمع رہ گئی تھی سو وہ بھی خموش ہے
مولانا محمد جمال فیض آبادی

چند منتشر یادیں
مولانا محمد اسلم شیخوپوری

اک چراغ اور بجھا اور بڑھی تاریکی
پروفیسر غلام رسول عدیم

چند یادگار ملاقاتیں
پروفیسر ڈاکٹر علی اصغر چشتی

امام اہل سنتؒ: چند یادیں، چند تأثرات
حافظ نثار احمد الحسینی

ایک عہد ساز شخصیت
پروفیسر ڈاکٹر حافظ محمود اختر

پروانے جل رہے ہیں اور شمع بجھ گئی ہے
مولانا ظفر احمد قاسم

وما کان قیس ہلکہ ہلک واحد
حضرت مولانا عبد القیوم حقانی

ہم یتیم ہوگئے ہیں
مولانا محمد احمد لدھیانوی

میرے مہربان مولانا سرفراز خان صفدرؒ
ڈاکٹر حافظ محمد شریف

مثالی انسان
مولانا ملک عبد الواحد

وہ جسے دیکھ کر خدا یاد آئے
مولانا داؤد احمد میواتی

دو مثالی بھائی
مولانا گلزار احمد آزاد

امام اہل سنت رحمۃ اللہ علیہ چند یادیں
مولانا محمد نواز بلوچ

میرے مشفق اور مہربان مرشد
حاجی لقمان اللہ میر

مت سہل ہمیں جانو
ڈاکٹر فضل الرحمٰن

حضرت مولانا سرفراز صفدرؒ اور مفتی محمد جمیل خان شہیدؒ
مفتی خالد محمود

شیخ کاملؒ
مولانا محمد ایوب صفدر

اولئک آبائی فجئنی بمثلھم
مولانا عبد القیوم طاہر

چند یادیں اور تاثرات
مولانا مشتاق احمد

باتیں ان کی یاد رہیں گی
صوفی محمد عالم

یادوں کے گہرے نقوش
مولانا شمس الحق مشتاق

علمائے حق کے ترجمان
مولانا سید کفایت بخاری

دینی تعلق کی ابتدا تو ہے مگر انتہا نہیں
قاری محمد اظہر عثمان

امام اہل سنت مولانا سرفراز خان صفدر
مولانا الطاف الرحمٰن

امام اہل سنتؒ اور ان کا پیغام
حافظ محمد عامر جاوید

ایک شخص جو لاکھوں کو یتیم کر گیا
مولانا عبد اللطیف قاسم چلاسی

تفسیر میں امام اہل سنتؒ کی بصیرت : ایک دلچسپ خواب
ڈاکٹر محمد حبیب اللہ قاضی

امام اہل سنتؒ ۔ چند ملاقاتیں
حافظ تنویر احمد شریفی

مجھے بھی فخر ہے شاگردئ داغِؔ سخن داں کا
ادارہ

سماحۃ الشیخ سرفراز خان صفدر علیہ الرّحمۃ ۔ حیاتہ و جہودہ الدینیۃ العلمیّۃ
ڈاکٹر عبد الماجد ندیم

امام اہل السنۃ المحدث الکبیر ۔ محمد سرفراز خان صفدر رحمہ اللہ
ڈاکٹر عبد الرزاق اسکندر

العلامۃ المحدث الفقیہ الشیخ محمد سرفراز خان صفدر رحمہ اللہ
ڈاکٹر محمد اکرم ندوی

محدث العصر، الداعیۃ الکبیر الشیخ محمد سرفراز صفدر رحمہ اللہ
مولانا طارق جمیل

امام اہل سنتؒ کے عقائد و نظریات ۔ تحقیق اور اصول تحقیق کے آئینہ میں
مولانا عبد الحق خان بشیر

حضرت شیخ الحدیث رحمہ اللہ کا منہج فکر اور اس سے وابستگی کے معیارات اور حدود
محمد عمار خان ناصر

درس تفسیر حضرت مولانا سرفراز خان صفدر ۔ سورۂ بنی اسرائیل (آیات ۱ تا ۲۲)
محمد عمار خان ناصر

حضرات شیخین کی چند مجالس کا تذکرہ
سید مشتاق علی شاہ

خطبہ جمعۃ المبارک حضرت مولانا سرفراز خان صفدرؒ
مولانا محمد سرفراز خان صفدرؒ

امام اہل سنت رحمہ اللہ کے دلچسپ واقعات
مولانا محمد فاروق جالندھری

حفظ قرآن اور دورۂ حدیث مکمل کرنے والے طلبہ سے امام اہل سنتؒ کا ایک ایمان افروز تربیتی خطاب
مولانا محمد سرفراز خان صفدرؒ

تعلیم سے متعلق ایک سوال نامہ کا جواب
مولانا محمد سرفراز خان صفدرؒ

امام اہل سنتؒ کی فارسی تحریر کا ایک نمونہ
مولانا محمد سرفراز خان صفدرؒ

امام اہل سنتؒ کے منتخب مکاتیب
مولانا محمد سرفراز خان صفدرؒ

ہمارے پیر و مرشد
محمد جمیل خان

امام اہل سنت کے چند واقعات
سید انصار اللہ شیرازی

تعزیتی پیغامات اور تاثرات ۔ بسلسلہ وفات حضرت مولانا سرفراز خان صفدرؒ
ادارہ

حضرت شیخ الحدیثؒ کی وفات پر اظہار تعزیت کرنے والے مذہبی و سیاسی راہ نماؤں کے اسمائے گرامی
ادارہ

مسئلہ حیات النبی صلی اللہ علیہ وسلم اور متوازن رویہ
مولانا ابوعمار زاہد الراشدی

امام اہل سنتؒ کے علمی مقام اور خدمات کے بارے میں حضرت مولانا محمد حسین نیلویؒ کی رائے گرامی
ادارہ

امام اہل سنت رحمہ اللہ کا دینی فکر ۔ چند منتخب افادات
مولانا محمد سرفراز خان صفدرؒ

حضرت مولانا سرفراز خان صفدرؒ ۔ شجرۂ نسب سلسلہ نقشبندیہ مجددیہ
ادارہ

سلسلہ نقشبندیہ میں حضرت شیخ الحدیثؒ کے خلفاء
ادارہ

آہ! اب رخصت ہوا وہ اہل سنت کا امام
محمد عمار خان ناصر

اے سرفراز صفدر!
مولوی اسامہ سرسری

ان کو ڈھونڈے گا اب تو کہاں راشدی
مولانا ابوعمار زاہد الراشدی

امام اہل سنت قدس سرہ
مولانا غلام مصطفٰی قاسمی

حضرت مولانا سرفراز خان صفدرؒ کی یاد میں
مولانا منظور احمد نعمانی

مضی البحران صوفی و صفدر
حافظ فضل الہادی

علم کی دنیا میں تو ہے سربلند و سرفراز
ادارہ

قصیدۃ الترحیب
ادارہ

خطیب حق بیان و راست بازے
محمد رمضان راتھر

Flag Counter