سماحۃ الشیخ سرفراز خان صفدر علیہ الرّحمۃ ۔ حیاتہ و جہودہ الدینیۃ العلمیّۃ

ڈاکٹر عبد الماجد ندیم

عند ذکر الصالحین تتنزّل الرحمۃ، ولِمَ لا؟ إنّ الصالحین تکون حیاتہم حافلۃ بذکر اللّہ سبحانہ و تعالی: الذّکر باللسان و الذّکر بالقلب و الذّکر بالجوارح، وکلُّ عملٍ یقومون بہ یعبّر عن وحدانیۃ اللّہ، ولسان کلّ من رآہم أو صاحبَہم أوحدّث عنہم أو سمع عنہم ینطلق ب کلمات سبحان اللّہ، و الحمد للّہ، ولا إلہ إلّا اللّہ، واللّہ أکبر وغیرہا من التسبیحات والتحمیدات، والتہلیلات، والتکبیرات. وإنّ ذکر اللّہ ہو المنبع لجمیع الرّحمات، وبالإضافۃ إلی ذلک شخصیات الأبرار توفّر لنا دروساً من حیاتہم الذاکرۃ، ونحن نجد فیہا أسوۃ نتأسّی بہا، وقدوۃً نقتدي بآثارہا، فکلّما نذکرہم نذکر أسوتہم وحیثما نتحدّث عنہم تتجلّی لنا قدوتہم، والنفس تتأثر بأحوالہم، فیکون ہذا الذکر تذکیراً لنا حتّی نزیّن بہا حیاتنا، فتعمّ الرّحمۃ، وکیف لا؟ وہم ذکروا الرّحمن والرّحمن موفیاً بوعدہ یذکرہم فعند ذکرنا لہم نتمثّل بأمر اللہ وفعلہ فذاک سبب آخر لتنزّل الرّحمۃ.

أرجو من المولی الکریم أن تجلب ہذہ السطور الّتي قمتُ بکتابتہا لي الرّحمۃ، وإنّ ظنّي بالشّیخ أبي الزاہد سرفراز خان صفدر أنّہ من الّذین أدعو من اللّہ عزّ وجلّ أن یدخلني الجنّۃ معہم، (اللہم أدخلنا الجنّۃ مع الأبرار) اللہمّ حقّق ظنّی فیہ! فکیف لا أظنّ بہ ہذا الظنّ ورأیت شیخی ومرشدي السیّد نفیس الحسینی رحمہ اللّہ یحترمہ و یقدّرہ ویجلّلہ ویمجِّدہ، ویقول فیہ کلماتٍ مبارکۃً عظیمۃً، وذلک لأنّ سماحۃ الشّیخ سرفراز خان قضی حیاتہ کلّہا تقیّۃ نقیّۃ، وکان ینشد إعلاء کلمۃ الحقّ، وسلک طریق العلم والدّین، وغُذِّيَ بالرّوح الفاروقيّ مُنِح من شیخہ العظیم المعروف بشیخ العرب والعجم حسین أحمد المدنی رحمۃ اللّہ علیہ، لقب ’’صفدر‘‘ یعني الفارق بین الحق والباطل حتّی جعلہ الشیخ سرفراز خان تخلّصاً لہ وقام بإحقاق الحقّ وإبطال الباطل حیثما وعندما لاحت لہ لوائحہ، وقاومَ ضدّ المخاطر من البدع والرّسوم السّیءۃ واللاشرعیۃ، بلسانہ من خلال خُطبہ وکلامہ، وبِقلمہ من خلال تصنیفاتہ و تألیفاتہ، ولو اقتضی الأمر فخرج إلی الشّارع وتظاہر ضدّ الحُکّام وفساد أوامرہم، حتّی زار السّجن أکثر من مرّۃٍ مرحّباً بہ و معتنقاً بحیاتہ المعسرۃ، غیر خاءِفٍ ولا متردِّدٍ. جزاہ اللہ وأحسن الجزاءَ

فشیخنا المذکور أبو الزّاہد سرفراز خان صفدر بن نور أحمد خان بن گل أحمد خان من قبیلۃ مندراوی سواتي من یوسف زئی پٹہان، ولد فی سنۃ ۱۹۱۴م ب ’’مانسہرہ ہزارہ‘‘ ونشأ فی بیءۃ أمیّۃ وکانت المنطقۃ الّتی تولّد فیہا سماحۃ الشّیخ قلیلۃ العمران فقیدۃ العلم، فرعی الشیخ الغنم فی بدایۃ حیاتہ ولم یکن یتعلّم شیئاً حتّی جاء ت سنۃ ۱۹۲۵م عندما بلغ السنۃ الحادیۃ عشرۃ من عمرہ۔

ولما أنّ أباہ وأجدادہ کانوا متدیّنین ولکنْ بسبب أحوالہم الجغرافیۃ العسیرۃ الخاصّۃ لم یتمکّنوا من الحصول علی العلمِ، فکان من تمنّیات أبیہ الشدیدۃ أن یکون من أبناۂ من یتعلّم الدّین و ینشرہ، فقدر اللہ لابنیہ الشّیخین: سرفراز خان صفدر، وعبد الحمید خان السّواتي أن یقوما بتحقیق تمنّیاتہ وینشرا علم الدّین حتّی یُذکَر أبوہم في الکتب والمقالاتِ، وتسطر الأقلام وتحمل القراطیس اسمہ کأبٍ للعَلَمین الجلیلین الّذین أضاء ا بعلمہما قلوب أہل شبہ القارّۃ، الّذي لم یکنْ یقرأ شیئاً من القرآن إلا جزء اً منہ ولکنّہ قد أنجب ولدین فسّرا القرآن ونشراہ، ووقفا حیاتہما علی خدمۃ الدّین، وربّیا أولادہما علی تربیۃٍ حتّی لم یبق ہمّہم إلا أن یخدموا الدّین والعلمَ لیلَ نہار.

و بدأ یتعلّم سرفراز خان الولد البالغ إحدی عشرۃ سنۃ علی یدي ابن عمّتہ مولوي سید فتح علي شاہ رحمہ اللّہ القاعدۃ العربیۃ و القرآن الکریم ببلدہ مانسہرہ۔والتحق في سنۃ ۱۹۲۸م ب مدرسۃ عصریۃ، حتّی وصل إلی الصفّ الثالث، وعندما أقام غلام غوث ہزاروي علیہ الرحمۃ مدرسۃ دینیۃ فی مانسہرہ التحق بہا في الصّفّ الثّالث وحفظ بہا کتاب ’’ تعلیم الإسلام‘‘ للمفتی کفایت اللّہ دہلوي رحمہ اللّہ، وتعلّم الخطابۃَ، وتلمذ علی مولانا غلام غوث ہزارويؒ ودرس منہ جزء اً من ’’نحو میر‘‘ بالإضافۃ إلی ’’تعلیم الإسلام‘‘.

وفي السنۃ ۱۹۲۸م أکرہہ عطشہ العلمي أن یخرج من بلدہ إلی بقاع الأرض حتّی یصل إلی مکانتہ المبتغاۃ الّتی کانت مقدّرۃ لہ، وصار الشیخ یرتحل من بلدٍ إلی بلدٍ فی شبہ القارّۃ من کوئتہ إلی کلکتۃ یلتمس العلم، وکان یصاحبہ في ہذہ الأسفار الطویلۃ أخوہ العلّامۃ عبد الحمید خان سواتي رحمہ اللّہ، ومرّۃ واحدۃً افترقا ولم یکن یعرف الشّیخ مکان وجود أخیہ الصّغیر فتجوّل في البلدان یطلب العلم و یسأل أہل مراکز العلم عن أخیہ، حتّی أُخبر أنّہ سافر إلی ملتان، فعزم الشیخ علی السفر إلی ملتان حتّی وصل إلی مدرسۃ الشیخ المفتي عبد العلیم رحمہ اللّہ (۱۳۵۹ہ/۱۹۴۰م) حفید الشیخ خواجہ عبید اللّہ الملتاني رحمہ اللّہ (توفّي۱۳۰۵ہ/۱۸۸۸م)، وکانت مدرسۃ الشّیخ المفتی وشخصیّتہ ملتقی للعلم والعلماء وکان یدرس عندہ أعلام المدارس المختلفۃ من المسلمین مثل الشّیخین المذکورین و الشیخ عبد اللہ البہلوي رحمہ اللّہ، والشیخ علي محمد (دار العلوم کبیروالہ) و الشیخ فخر الدین (دار العلوم دیوبند) ومولانا فیض الحسن شاہ جمالي وأعلام من البریلویۃ، ورجالٌ من غیر المقلّدین مثل المحدّث الملتانيّ الشیخ عبد التواب رحمہ اللّہ وغیرہم ۔، فالتقی بہا الأخوان وتلمذا علی ید الشیخ المفتي عبد العلیم رحمہ اللّہ ودرسا کتیباً في علم المیراث، وہذا الکتیّب عبارۃ عن قصیدۃ کاملۃٍ حول أحکام المیراث وشرحہا، بعد إکمال ہذا الکتیِّب والورود بموارد أخری من العلم، ارتحل الشیخ مع أخیہ إلی کوجرانوالہ وذلک في سنۃ ۱۹۳۸م فالتحق بہا بمدرسۃ ’’أنوار العلوم‘‘ وتعلّم علی مولانا عبد القدیر کیمل پوریؒ الہدایۃ، والبیضاوي، وکتب الفنّ ومشکوۃ المصا بیح وغیرہا من الکتب. وہکذا تلمذ علی ید المفتی عبد الواحدؒ ودرس ’’المطوّل‘‘ و ’’ السّراجي‘‘.

وفي سنۃ ۱۹۴۰م التحق مع أخیہ الصغیر بأزہر الہند ’’دار العلوم دیوبند‘‘ وتلمذ بہا علی أکابر أساتذتہا: مولانا حسین أحمد المدنیؒ ، ومولانا محمد إبراہیم البلیاويؒ ، و مولانا إعزاز علي الدیوبنديؒ . حتّی حصل علی شہادۃ الفراغ وأجازہ الشیخ حسین أحمد المدنی رحمہ اللّہ إجازۃ خاصّۃ من عندہ للحدیث والکتب والفنون المتداولۃ.

وفي سنۃ ۱۹۴۱م بعد الفراغ من دار العلوم دیوبند تعلّم تفسیر القرآن وحصل علی شہادۃ التفسیر والحدیث والبیعۃ والخلافۃ من مولانا حسین علي بواں بچراں.

ومن سنۃ ۱۹۴۲م صار یدرّس الکتب الدینیّۃ فی مدرسۃ ’’أنوار العلوم‘‘ و من سنۃ ۱۹۴۳م. عُیِّنَ إماماً وخطیباً بالمسجد الجامع ب بوہڑ والی گکہڑ وفي نفس السنۃ بدأ یدرّس ترجمۃ معانی القرآن ومفاہیمہ أمام جمعٍٍ من الأساتذۃ والعاملین ب المعہد الحکوميّ فی گکہڑ. ومن سنۃ ۱۹۵۵م. صار یدرِّسُ بمدرسۃ نصرۃ العلوم.

وأمّا فی مجال التّصنیف فبدأ الشیخ علیہ الرحمۃ سلسلۃ التّألیف في سنۃ ۱۹۴۴م إذ ألّف أوّل کتابٍ لہ باسم ’’الکلام الحاوي في تحقیق عبارۃ الطحاوی‘‘، وفي سنۃ ۱۹۴۷م صنّف کتابہ المسمّی ب ’’آئینہ محمدی‘‘ . و بسنۃ ۱۹۴۹م ’’تبرید النواظر‘‘ و بسنۃ ۱۹۵۰م. ’’گلدستہ توحید‘‘ وفي سنۃ ۱۹۵۳م ألّف الکتاب’’صرف ایک اسلام بجواب دو اسلام‘‘ ومن الجدیر بالذّکر أن أغلب جزء لہذا الکتاب أُلِّف أثناء أیّامہ وکان مقیّداً فی سجن ملتانَ بسبب حرکۃ ختم النبوّۃ، ومن خلال ہذا القید کان یدرِّسُ فی السجن دروساً لمؤطّا الإمام مالک، و حجۃ اللّہ البالغۃ، و نخبۃ الفکر، و الہدایۃ. وفی سنۃ ۱۹۵۴م صنّف کتیِّباً باسم ’’چالیس دعائیں‘‘ وفي سنۃ ۱۹۵۵م ألّف کتابہ الشہیر ’’أحسن الکلام فی ترک القراء ۃ خلف الإمام‘‘ و’’مسئلہ قربانی مع رسالہ سیف یزداني‘‘. وفي سنۃ ۱۹۵۶م ترجم کتیِّبَ سماحۃ الشیخ السید حسین أحمد المدنی ’’حلیۃ المسلمین مع رسالۃ إعفاء اللحیۃ‘‘ بالأردیۃ. وفي سنۃ ۱۹۵۷م ألّف کتابہ القیّم ’’المنہاج الواضح یعنی راہ سنّت‘‘ وفي ۱۹۵۸م ’’راہ ہدایت‘‘ وفي سنۃ ۱۹۵۹م قدّم ل ’’الفقہ الأکبر‘‘ للإمام الأعظم أبي حنیفۃ رحمہ اللّہ تعالی تقدیماً طویلاً. وصنف ’’إزالۃ الرّیب عن عقیدۃ علم الغیب‘‘ و ’’ضوء السراج في تحقیق المعراج چراغ کی روشنی‘‘ وفي۱۹۶۰م ’’مسئلۃ مختار کل الموسوم دل کا سرور‘‘ و ’’انکار حدیث کے نتائج‘‘ وفي سنۃ ۱۹۶۲م ’’مقام أبی حنیفہؒ ‘‘ و’’طائفہ منصورہ‘‘ و ’’عیسائیت کا پس منظر‘‘ وفي سنۃ ۱۹۶۳م. ’’بانی دار العلوم دیوبند‘‘ وفي ۱۹۶۴م ’’تبلیغ اسلام‘‘ و ’’باب جنت بجواب راہ جنت‘‘ وفي ۱۹۶۵م. ’’تنقید متین بر تفسیر نعیم الدین‘‘ وفي ۱۹۶۶م. ’’مرزائی کا جنازہ اور مسلمان‘‘ و ’’درود شریف پڑہنے کا شرعی طریقہ‘‘ وفي ۱۹۶۷م. ’’حضرت ملا علي القاريؒ اور علم غیب و حاضر وناظر‘‘ وفي ۱۹۶۸م ’’عمدۃ الأثاث في حکم الطلقات الثلاث‘‘ وفي ۱۹۷۰م ’’مودودی صاحب کا ایک غلط فتوی اور ان کے چند دیگر باطل نظریات‘‘ وفي السنۃ نفسہا أکمل کتابہ ’’شوق حدیث‘‘.وفي ۱۹۷۱م ’’شوق جہاد‘‘ وفي ۱۹۷۲م ’’عبارات أکابر‘‘ وفي ۱۹۷۴م ’’حکم الذکر بالجہر‘‘ وفي ۱۹۷۵م ’’سماع الموتی الملقب بإثبات السماع والشعور لجملۃ أہل القبور‘‘ وفي ۱۹۷۶م تفریح الخواطر في رد تنویر الخواطر‘‘ وفي ۱۹۷۸م أکمل کتابہ الجلیل ’’تسکین الصدور في تحقیق أحوال الموتی في البرزخ والقبور‘‘ وفي۱۸۸۱م ’’إتمام البرہان في ردّ توضیح البیان‘‘ و ’’إخفاء الذکر‘‘ وفي ۱۹۸۳م. ’’الشہاب المبین علی من أنکر الحق الثابت بالأدلۃ والبراہین‘‘ وفي ۱۹۸۴م. ’’الکلام المفید في إثبات التقلید‘‘ وفي ۱۹۸۵م. ’’إظہار العیب في کتاب إثبات علم الغیب‘‘ وفي ۱۹۸۶م کتب مقالۃً حول ’’ختم نبوت کتاب وسنت کی روشنی میں‘‘ وألّف کتابہ ’’المسلک المنصور في رد الکتاب المسطور‘‘ وفي ۱۹۸۸م ’’إحسان الباری لفہم البخاري‘‘ و في السنۃ نفسہا کتب ’’مقدمۃ تدقیق الکلام‘‘ وألحقہا فی ختام کتابہ ’’أحسن الکلام‘‘. وفي ۱۹۹۲م ’’خزائن السنن‘‘ وفي ۱۹۹۶م ألّف کتابہ الأخیر’’توضیح المرام في نزول المسیح علیہ السلام ‘‘. ومن سنۃ ۲۰۰۲م. إلی ۲۰۰۸م طبعت دروسہ القرآنیۃ الّتی ألقاہا علی جمعٍ من عامّۃ النّاس في گکہڑ بعد صلاۃ الفجر باللغۃ البنجابیّۃ فترجمت بالأردیّۃ فسمّاہا سماحۃ الشیخ بالاسم ’’ذخیرۃ الجنان في فہم القرآن‘‘ وقد طبع منہا ثمانیۃ مجلّداتٍ حتی الآن. وفي ۲۰۰۷م. طبعت خطبہ باسم ’’خطبات امام اہل سنّت‘‘ فی ثلاثۃ مجلّداتٍ، وبالإضافۃ إلی ہذہ الکتب کتب الشّیخ مقدِّماتٍ لکتبٍ متعددۃ ومقالاتٍ لعدّۃ جرائد و مجلّاتٍ مختلفۃ.

لم تکن خدمات سماحۃ الشّیخ الدینیۃ منحصرۃ فی مجال العلم بل قدّم خدمات جلیلۃ أخری فی المیادین العملیۃ مثل السیاسۃ وإرشاد النّاس والحکّام إلی الطریق المستقیم، وکان یحبّ الجہاد في سبیل اللّہ ویتشوّق إلیہ فاشتری السیف من وظیفتہ الشہریۃ عندما عیِّنَ إماماً في مسجد بمنطقۃ من مناطق مانسہرہ سنۃ ۱۹۳۴م.، و من ۱۹۳۵م إلی ۱۹۴۵م لم یزل عضواً متحمِّساً لمجلس الأحرار الإسلامي، واشتغل بأمور المسلمین ولم یمتنع من ایّۃ ممارسۃ ضدّ انتہاک حرمات المسلمین في عہد الإنجلیز، واشترک في المؤتمرات الّتی عقدہا المسلمون بوجودہ و خُطبہ، وبسبب حرکۃ ختم النبوۃ ب ۱۹۵۳م قضی أکثر من تسعۃ أشہر في السجن بکوجرانوالہ و ملتان. وفي ۱۹۵۶م التحق ب ’’جمعیۃ علماء الإسلام‘‘ الجماعۃ السیاسیّۃ الدینیّۃ فی باکستان، ولم یزل لمدّۃ مدیدۃ عضو مجلس الشوری المرکزيّ للجمعیّۃ، و أمیرہا لفرع گوجرانوالہ. وتراأس غیرہا من الجماعات الإسلامیۃ الدّینیۃ، وخدم الإسلام والمسلمین في مجالات خدمیّۃ مختلفۃ.

ووافت ہذہ الحیاۃ الحافلۃ بالعلم والخدمات الدینیۃ أجلہا ب الخامس من مایو سنۃ ۲۰۰۹م.، الموافق ب التاسع من جمادی الأولی سنۃ ۱۴۳۰ہ.یوم الثلاثاء لیلاً. وترک سماحۃ الشّیخ سرفراز خان صفدر علیہ الرحمۃ وراء ہ الصدقات الجاریۃ في صورۃ کتبہ، ومقالاتہ، وأولادہ العلماء الأتقیاء. 

جزاہ اللّہ منّا ومن جمیع المنتسبین إلیہ من الأولاد و المسترشدین والتلامذۃ والمحبّین أحسن جزاءٍ.

شخصیات

جولائی تا ستمبر ۲۰۰۹ء

جلد ۲۰ ۔ شمارہ ۷ تا ۱۰

گر قبول افتد زہے عز و شرف
محمد عمار خان ناصر

ہم نے تمام عمر گزاری ہے اس طرح (۱)
مولانا محمد سرفراز خان صفدرؒ

ہم نے تمام عمر گزاری ہے اس طرح (۲)
مولانا محمد سرفراز خان صفدرؒ

حضرت شیخ الحدیثؒ کے اساتذہ کا اجمالی تعارف
مولانا محمد یوسف

امام اہل سنتؒ کے چند اساتذہ کا تذکرہ
مولانا قاضی نثار احمد

گکھڑ میں امام اہل سنت کے معمولات و مصروفیات
قاری حماد الزہراوی

امام اہل سنت رحمۃ اللہ علیہ کا تدریسی ذوق اور خدمات
مولانا عبد القدوس خان قارن

امام اہل سنت رحمہ اللہ کی قرآنی خدمات اور تفسیری ذوق
مولانا محمد یوسف

امام اہل سنت رحمہ اللہ کی تصانیف: ایک اجمالی تعارف
مولانا عبد الحق خان بشیر

امام اہل سنتؒ کی تصانیف اکابر علما کی نظر میں
حافظ عبد الرشید

حضرت شیخ الحدیث رحمہ اللہ اور دفاعِ حدیث
پروفیسر ڈاکٹر محمد اکرم ورک

منکرینِ حدیث کے شبہات کے جواب میں مولانا صفدر رحمہ اللہ کا اسلوبِ استدلال
ڈاکٹر محمد عبد اللہ صالح

’’مقام ابی حنیفہ‘‘ ۔ ایک علمی و تاریخی دستاویز
ڈاکٹر انوار احمد اعجاز

’’عیسائیت کا پس منظر‘‘ ۔ ایک مطالعہ
ڈاکٹر خواجہ حامد بن جمیل

حضرت شیخ الحدیث رحمہ اللہ کی تصانیف میں تصوف و سلوک کے بعض مباحث
حافظ محمد سلیمان

سنت اور بدعت ’’راہ سنت‘‘ کی روشنی میں
پروفیسر عبد الواحد سجاد

مولانا محمد سرفراز خان صفدر رحمہ اللہ کا انداز تحقیق
ڈاکٹر محفوظ احمد

مولانا محمد سرفراز خان صفدر کا اسلوب تحریر
نوید الحسن

امام اہل سنت رحمہ اللہ کا شعری ذوق
مولانا مومن خان عثمانی

حضرت والد محترمؒ سے وابستہ چند یادیں
مولانا ابوعمار زاہد الراشدی

شمع روشن بجھ گئی بزم سخن ماتم میں ہے
قاضی محمد رویس خان ایوبی

والد محترم کے ساتھ ایک ماہ جیل میں
مولانا عبد الحق خان بشیر

پیکر علم و تقویٰ
مولانا شیخ رشید الحق خان عابد

دو مثالی بھائی
مولانا حاجی محمد فیاض خان سواتی

حضرت والد محترمؒ کے آخری ایام
مولانا عزیز الرحمٰن خان شاہد

میرے بابا جان
ام عمران شہید

ذَہَبَ الَّذِیْنَ یُعَاشُ فِیْ اَکْنَافِہِمْ
اہلیہ قاری خبیب

اب جن کے دیکھنے کو اکھیاں ترستیاں ہیں
ام عمار راشدی

ابا جیؒ اور صوفی صاحبؒ ۔ شخصیت اور فکر و مزاج کے چند نمایاں نقوش
محمد عمار خان ناصر

قبولیت کا مقام
مولانا محمد عرباض خان سواتی

جامع الصفات شخصیت
مولانا قاری محمد ابوبکر صدیق

ایک استاد کے دو شاگرد
حافظ ممتاز الحسن خدامی

داداجان رحمہ اللہ ۔ چند یادیں، چند باتیں
حافظ سرفراز حسن خان حمزہ

کچھ یادیں، کچھ باتیں
حافظ محمد علم الدین خان ابوہریرہ

اٹھا سائبان شفقت
حافظ شمس الدین خان طلحہ

ملنے کے نہیں نایاب ہیں ہم
ام عفان خان

نانا جان علیہ الرحمہ کی چند یادیں
ام ریان ظہیر

میرے دادا جی رحمۃ اللہ علیہ
ام حذیفہ خان سواتی

میرے شفیق نانا جان
ام عدی خان سواتی

وہ سب ہیں چل بسے جنہیں عادت تھی مسکرانے کی
بنت قاری خبیب احمد عمر

بھولے گا نہیں ہم کو کبھی ان کا بچھڑنا
بنت حافظ محمد شفیق (۱)

دل سے نزدیک آنکھوں سے اوجھل
اخت داؤد نوید

مرنے والے مرتے ہیں لیکن فنا ہوتے نہیں
بنت حافظ محمد شفیق (۲)

شیخ الکل حضرت مولانا سرفراز صاحب صفدرؒ
مولانا مفتی محمد تقی عثمانی

نہ حسنش غایتے دارد نہ سعدی را سخن پایاں
مولانا مفتی محمد عیسی گورمانی

امام اہل سنت کی رحلت
مولانا محمد عیسٰی منصوری

امام اہلِ سنتؒ کے غیر معمولی اوصاف و کمالات
مولانا سعید احمد جلالپوری

حضرت مولانا محمد سرفراز خاں صفدرؒ کا سانحۂ ارتحال
مولانا مفتی محمد زاہد

علم و عمل کے سرفراز
مولانا سید عطاء المہیمن بخاری

اک شمع رہ گئی تھی سو وہ بھی خموش ہے
مولانا محمد جمال فیض آبادی

چند منتشر یادیں
مولانا محمد اسلم شیخوپوری

اک چراغ اور بجھا اور بڑھی تاریکی
پروفیسر غلام رسول عدیم

چند یادگار ملاقاتیں
پروفیسر ڈاکٹر علی اصغر چشتی

امام اہل سنتؒ: چند یادیں، چند تأثرات
حافظ نثار احمد الحسینی

ایک عہد ساز شخصیت
پروفیسر ڈاکٹر حافظ محمود اختر

پروانے جل رہے ہیں اور شمع بجھ گئی ہے
مولانا ظفر احمد قاسم

وما کان قیس ہلکہ ہلک واحد
حضرت مولانا عبد القیوم حقانی

ہم یتیم ہوگئے ہیں
مولانا محمد احمد لدھیانوی

میرے مہربان مولانا سرفراز خان صفدرؒ
ڈاکٹر حافظ محمد شریف

مثالی انسان
مولانا ملک عبد الواحد

وہ جسے دیکھ کر خدا یاد آئے
مولانا داؤد احمد میواتی

دو مثالی بھائی
مولانا گلزار احمد آزاد

امام اہل سنت رحمۃ اللہ علیہ چند یادیں
مولانا محمد نواز بلوچ

میرے مشفق اور مہربان مرشد
حاجی لقمان اللہ میر

مت سہل ہمیں جانو
ڈاکٹر فضل الرحمٰن

حضرت مولانا سرفراز صفدرؒ اور مفتی محمد جمیل خان شہیدؒ
مفتی خالد محمود

شیخ کاملؒ
مولانا محمد ایوب صفدر

اولئک آبائی فجئنی بمثلھم
مولانا عبد القیوم طاہر

چند یادیں اور تاثرات
مولانا مشتاق احمد

باتیں ان کی یاد رہیں گی
صوفی محمد عالم

یادوں کے گہرے نقوش
مولانا شمس الحق مشتاق

علمائے حق کے ترجمان
مولانا سید کفایت بخاری

دینی تعلق کی ابتدا تو ہے مگر انتہا نہیں
قاری محمد اظہر عثمان

امام اہل سنت مولانا سرفراز خان صفدر
مولانا الطاف الرحمٰن

امام اہل سنتؒ اور ان کا پیغام
حافظ محمد عامر جاوید

ایک شخص جو لاکھوں کو یتیم کر گیا
مولانا عبد اللطیف قاسم چلاسی

تفسیر میں امام اہل سنتؒ کی بصیرت : ایک دلچسپ خواب
ڈاکٹر محمد حبیب اللہ قاضی

امام اہل سنتؒ ۔ چند ملاقاتیں
حافظ تنویر احمد شریفی

مجھے بھی فخر ہے شاگردئ داغِؔ سخن داں کا
ادارہ

سماحۃ الشیخ سرفراز خان صفدر علیہ الرّحمۃ ۔ حیاتہ و جہودہ الدینیۃ العلمیّۃ
ڈاکٹر عبد الماجد ندیم

امام اہل السنۃ المحدث الکبیر ۔ محمد سرفراز خان صفدر رحمہ اللہ
ڈاکٹر عبد الرزاق اسکندر

العلامۃ المحدث الفقیہ الشیخ محمد سرفراز خان صفدر رحمہ اللہ
ڈاکٹر محمد اکرم ندوی

محدث العصر، الداعیۃ الکبیر الشیخ محمد سرفراز صفدر رحمہ اللہ
مولانا طارق جمیل

امام اہل سنتؒ کے عقائد و نظریات ۔ تحقیق اور اصول تحقیق کے آئینہ میں
مولانا عبد الحق خان بشیر

حضرت شیخ الحدیث رحمہ اللہ کا منہج فکر اور اس سے وابستگی کے معیارات اور حدود
محمد عمار خان ناصر

درس تفسیر حضرت مولانا سرفراز خان صفدر ۔ سورۂ بنی اسرائیل (آیات ۱ تا ۲۲)
محمد عمار خان ناصر

حضرات شیخین کی چند مجالس کا تذکرہ
سید مشتاق علی شاہ

خطبہ جمعۃ المبارک حضرت مولانا سرفراز خان صفدرؒ
مولانا محمد سرفراز خان صفدرؒ

امام اہل سنت رحمہ اللہ کے دلچسپ واقعات
مولانا محمد فاروق جالندھری

حفظ قرآن اور دورۂ حدیث مکمل کرنے والے طلبہ سے امام اہل سنتؒ کا ایک ایمان افروز تربیتی خطاب
مولانا محمد سرفراز خان صفدرؒ

تعلیم سے متعلق ایک سوال نامہ کا جواب
مولانا محمد سرفراز خان صفدرؒ

امام اہل سنتؒ کی فارسی تحریر کا ایک نمونہ
مولانا محمد سرفراز خان صفدرؒ

امام اہل سنتؒ کے منتخب مکاتیب
مولانا محمد سرفراز خان صفدرؒ

ہمارے پیر و مرشد
محمد جمیل خان

امام اہل سنت کے چند واقعات
سید انصار اللہ شیرازی

تعزیتی پیغامات اور تاثرات ۔ بسلسلہ وفات حضرت مولانا سرفراز خان صفدرؒ
ادارہ

حضرت شیخ الحدیثؒ کی وفات پر اظہار تعزیت کرنے والے مذہبی و سیاسی راہ نماؤں کے اسمائے گرامی
ادارہ

مسئلہ حیات النبی صلی اللہ علیہ وسلم اور متوازن رویہ
مولانا ابوعمار زاہد الراشدی

امام اہل سنتؒ کے علمی مقام اور خدمات کے بارے میں حضرت مولانا محمد حسین نیلویؒ کی رائے گرامی
ادارہ

امام اہل سنت رحمہ اللہ کا دینی فکر ۔ چند منتخب افادات
مولانا محمد سرفراز خان صفدرؒ

حضرت مولانا سرفراز خان صفدرؒ ۔ شجرۂ نسب سلسلہ نقشبندیہ مجددیہ
ادارہ

سلسلہ نقشبندیہ میں حضرت شیخ الحدیثؒ کے خلفاء
ادارہ

آہ! اب رخصت ہوا وہ اہل سنت کا امام
محمد عمار خان ناصر

اے سرفراز صفدر!
مولوی اسامہ سرسری

ان کو ڈھونڈے گا اب تو کہاں راشدی
مولانا ابوعمار زاہد الراشدی

امام اہل سنت قدس سرہ
مولانا غلام مصطفٰی قاسمی

حضرت مولانا سرفراز خان صفدرؒ کی یاد میں
مولانا منظور احمد نعمانی

مضی البحران صوفی و صفدر
حافظ فضل الہادی

علم کی دنیا میں تو ہے سربلند و سرفراز
ادارہ

قصیدۃ الترحیب
ادارہ

خطیب حق بیان و راست بازے
محمد رمضان راتھر