امام اہل السنۃ المحدث الکبیر ۔ محمد سرفراز خان صفدر رحمہ اللہ

ڈاکٹر عبد الرزاق اسکندر

الحمد للہ رب العالمین، والصلوۃ والسلام علی اشرف الانبیاء والمرسلین، وعلی آلہ وصحبہ اجمعین۔ وبعد: 

فقد ورد عن النبی صلی اللہ علیہ وسلم انہ قال :ا لناس کابل ماءۃ، لا تکاد تجد فیہا راحلۃ (صحیح البخاری: ۲؍۹۶) لقد بین صلی اللہ علیہ وسلم فی ہذاالحدیث ان الشخصیات البارزۃ قلیلۃ فی کل شعب الحیاۃ، وانہا تتکون بعد مدۃ من الزمن۔ فالعلماء کثیرون ومتساوون فی اجسامہم ولباسہم وظواہرھم وحمل الشہادات، و لکن الراسخین فی العلم والمتفقہین فی الدین والعاملین بہ قلیلون، کما ان ماءۃ ابل فی ظواہرھا، فی اجسامہا والوانہا واشکالہا متساویۃ، ولکن الراحلۃ التی تتحمل متاعب السفر لا تکاد تجد فیہا الاواحدۃ۔ فامامام السنۃ المحدث الکبیر والمفسر والفقیہ الکبیرفضیلۃ الشیخ العلامۃ سرفراز خان صفدرؒ کان من تلک الشخصیات الفذۃ التی تتکون بعد فترۃ طویلۃ، وتکون جامعۃ لصفات الکمال۔ 

فکان رحمہ اللہ تعالی مفسرا، ومحدثا، وفقیہا، وخطیبا ومصنفا وشجاعاً، کما انہ تحلی بالخلق العظیم من التواضع واکرام الضیف وغیرھا من الصفات۔ قضی اکثر من ۵۰ سنۃ من حیاتہ خادما للکتاب والسنۃ والعلوم الاسلامیہ فی الجامعۃ التی اسسھا اخوہ فضیلۃ الشیخ عبدالحمید السواتیؒ ،کما عاش اماما وخطیبا فی جامع بلدہ، یربی الشعب المسلم علی الایمان وعلی الخلق والآداب الاسلامیۃ الی ان تلقی ربہ سبحانہ وتعالی۔ والیک نبذۃ موجزۃ من حیاتہ وترجمتہ: 

اسمہ ونسبہ: 

اسمہ سرفراز خان صفدربن نور احمدخان، وینتسب الی قبیلۃ مشہورۃ ذات منزلۃ فی ہذہ المنطقۃ، ’’ یوسف زئی‘‘۔

مولدہ ونشاتہ ودراستہ: 

ولد سنۃ ۱۳۳۲ للھجرۃ الموافق ۱۹۱۴م فی قریۃ ’’دھکی جیران‘ ‘ محافظۃ مانسہرہ اقلیم الحدود۔ نشا فی اسرۃ دینیۃ متمکسۃ بدینہا وخلقہا وآدابہا، وھی اسرۃ اشتہرت بکرم الضیافۃ۔

بدا الدراسۃ الابتدائیۃ الدینیۃ والعصریۃ فی محافظتہ ثم رحل الی اقلیم بنجاب ودرس الدراسۃ الثانویۃ الشرعیۃ وما یساوی الکلیۃ فی مدارسہا، فی مدن مختلفۃ، ثم شد الرحال مع اخیہ الشیخ صوفی عبدالحمید السواتی الی مرکز العلم والعرفان’’ جامعۃ دیوبند الاسلامیۃ‘‘ ( ازہر الہند) والتحق بھا فی الدراسات العلیا سنۃ ۱۹۳۹م، فدرس بھا آنذاک علوم الکتاب والسنۃ والفقہ الاسلامی علی کبار مشایخھا امثال فضیلۃ الشیخ المحدث حسین احمدالمدنی شیخ العرب والعجم، وفضیلۃ الشیخ المحدث والمفسر شبیر احمد العثمانی، اول شیخ الاسلام عند استقلال باکستان، فاستفاد منہم حق الاستفادۃ، وکان مرضیا عند مشایخہ، ممتازا بین اقرانہ، فتخرج من جامعۃ دیوبند الاسلامیۃ سنۃ ۱۹۴۰م ونال الشہادۃ العالمیۃ۔

التدریس بجامعۃ نصرۃ العلوم: 

رجع مع اخیہ الشیخ الصوفی عبد الحمید السواتی من دیوبند الی اقلیم بنجاب، ونزل فی مدینۃ ’’غوجرانوالہ‘‘ واسس اخوہ الجامعۃ الاسلامیۃ ’’جامعۃ نصرۃ العلوم‘‘ وھی من اکبر الجامعات الاسلامیۃ الاھلیۃ فی باکستان، وھی عضو فی وفاق المدارس العربیۃ۔ وبدا یدرس بھا علوم الکتاب والسنۃ والفقہ الاسلامی الی آخرحیاتہ اکثر من ۵۰سنۃ فصار مرجعا للعلماء والمدرسین، واتصف بصفا ت المعلم الناجح من کمال العلم، وفصاحۃ اللسان، والشفقۃ علی التلامیذ، والمواظبۃ علی اوقات التدریس، فقد جعل مقرہ فی بلدۃ ’’ غکر مندی‘‘ القربیۃ من غوجرانوالہ، ویاتی منہا علی الحافلۃ یومیا، وکان رحمہ اللہ موا ظباً لا یتاخر فی الصیف والشتاء والمطر۔ فتخرج علی یدیہ فی ہذہ المدۃ الالآف من طلبۃ العلم من انحاء باکستان وخارج باکستان من بنجلہ دیش، وافغانستان، والھند، وبورما، وایران وہذہ صدقہ جاریۃ لفضیلتہ الی یوم القیامۃ، ان شاء اللہ تعالی، مصداقا لقول النبی صلی اللہ علیہ وسلم: اذا مات ابن آدم انقطع عنہ عملہ الا عن ثلاث: صدقۃ جاریۃ او علم ینتفع بہ او ولد صالح یدعو لہ‘‘ ( صحیح مسلم: ۲؍۴۱) وہذہ الثلاثۃ حاصلۃ لفضیلتہ من: الجامعۃ، والتلامیذ العلماء، والاولاد الصالحین، والحمد للہ۔

اھتمامہ با لشعب المسلم: 

لم یکتف فضیلتہ ؒ بالتدریس واعداد العلماء، بل اہتم بامور المسلمین: الشعب المسلم، فقام بتوعیتہم توعیۃ اسلامیۃ، واختار لذلک المسجد مرکزا للدعوۃ والارشاد، وذلک مسجد حارتہ فی ’’غکر مندی‘‘ وجعل نفسہ فیہ اماماوخطیبا، وبدا فیہ العمل بغایۃ الصبر والحلم، لان جو البیءۃ کان غیر موات لہ، فالبیءۃ ساودھا الشرک والبدعات والخرافات، فبدا بالعمل بغایۃ الحکمۃ والصبروالتحمل، فبدا باصلاحہم عن طریق ’’درس القرآن الکریم‘‘ بعد صلاۃ الصبح، وعن طر یق خطبۃ الوعظ والارشاد باللغۃ المحلیۃ قبل خطبۃ الجمعۃ باللغۃ العربیہ۔

ملحوظۃ: 

ان علماء الھند وباکستان، جزاھم اللہ خیرا، حافظوا علی عربیۃ خطبۃ الجمعۃ، ولما ان معظم المصلین لا یعرفون العربیۃ، اختار العلماء لہم خطبۃ الوعظ والارشاد بلغۃ محلیۃ، لکی یعرفوا دینہم ویکونوا علی بصیرۃ من احکام الشریعۃ، فیجلس الخطیب او ای عالم علی المنبر قبل خطبۃ الجمعۃ، ویختار موضوعا مناسبا للظروف، ویرشدہم الی دینہم۔ ونجد مثال ہذا فی عہد الصحابۃ رضی اللہ عنہم، فقد کان سیدنا ابو ہریرۃ رضی اللہ عنہ یقف جنب المنبر قبل مجئ الخطبیب، ویحدث الناس بحدیث رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم، حتی اذا جاء الخطیب جلس۔

ہکذا استمر فضیلۃ الشیخ ؒ مدۃحیاتہ یرشد الشعب المسلم ویقوم بتوعیتہم توعیۃ دینیۃ، حتی غیر الجو، فصار اہل ہذا البلد متمسکین بتعالیم الکتاب والسنۃ، محبین لفضیلۃ الشیخ رحمہ اللہ تعالی، وظہر ہذا الحب فی جنازتہ ۵؍ مایو ۲۰۰۹م حیث حضرھا مئات الالآف المصلون العلماء والشعب وودعوہ ولسان حالہم یقول: العین تدمع، والقلب یحزن، وانا بفراقک یا شیخنا لمحزونون، ولا نقول الا بما یرضی بہ ربنا تبارک وتعالی۔ 

کیفیۃ درس القرآن الکریم: 

ان من عادۃ العلماء الائمۃ والخطباء انہم یعقدون درسا للقرآن الکریم بعد صلاۃ الفجر فی مساجدھم ویجلس المصلون، المتعلمون منہم خاصۃ، ویفتحون امامہم المصاحف فیتلو العالم بضع آیات من القرآن الکریم بالتجوید، ثم یاخذ کلمۃ کلمۃ ویبین معناھا باللغۃ المحلیۃ ویبین ھل ھی اسم او فعل او حرف، ثم یترجم معنی الآیۃ باللغۃ المحلیۃ، ثم یفسرھا۔ ویبدا بسورۃ الفاتحۃ حتی ینتھی الی سورۃالناس، وہکذا دوالیک۔ وفضیلتہ رحمہ اللہ تعالی کان یقوم بھذا الدرس طوال حیاتہ فی ہذا المسجد، واضافۃ الی ذلک بدا یلقی درس التفسیر فی مسجد الکلیۃ الحکومیۃ امام الاساتذۃ والطلاب واستمر الی آخر حیاتہ، ومن المعلوم ان ہذہ الطبقۃ خلاصۃ الشعب المسلم۔ 

جہودہ ضد الفر ق الباطلۃ والمنحرفۃ، والدفاع عن الحق واہلہ: 

توجد فی الہند وباکستان الفرق الباطلۃ والجماعات المنحرفۃ عن جادۃ الحق، فقام رحمہ اللہ تعالی یؤلف ضد ہذہ الفرق الباطلۃ والمنحرفۃ، وھو فی کتاباتہ یمتاز بالوقار وقوۃ الاستدلال والاعتدال وقد اعترف بذلک اکبر مخالفیہ۔ ویعتبر مولفاتہ حجۃ فی الموضوع، وقد کتب فی المسائل الخلافیۃ التی دارت فی الہند وباکستان واثبت فیھا الحق بالحجۃ والبرھان، وکانت ہذہ المؤلفات سببا لھدایۃ کثیر من الشعب، وخاصۃ المتعلمین منہم۔ 

من الواضح کالشمس فی رابعۃ النہار ان ’’جامعہ دیوبند الاسلامیہ‘‘ ( ازہر الہند) ومشایخھا ھم الذین نشروا التوحید وعلوم الکتاب والسنۃ فی القارۃ الھندیۃ، وکافحوا الشرک والبدعات والخرافات، وببرکۃ ہذہ الجامعۃ انشئت آلاف المدارس والجامعات فی الھند وباکستان۔ ولکن ہذا لم یعجب بعض الطوائف حسدا من عند انفسہم فبداوا یکتبون ضد اہل الحق مشایخ الجامعۃ ویفترون علیہم ما لم یقولوہ، وینقلون عباراتھم من کتبہم ویرتکبون الخیانۃ فی نقلہا۔ وبعضہا لم تبلغہا عقولہم وکم من عائب قولا صحیحا وآفتہ من الفہم السقیم، فقام رحمہ اللہ تعالی بالرد علی ہذہ الافتراء ات وکتب کتابا باسم ’ ’عبارات اکابر‘‘ کشف فیہ عن جہلھم وخیانتہم فی نقل العبارات۔

وکذالک کتب فی موضوعات اخری رد فیہا علی بعض الافکار الخاطءۃ،وھی باللغۃ الاردیۃ لان عامۃ الشعب یعرف ہذہ اللغۃ، ومن اہمہا:

۱۔ المنھاج الواضح (راہ سنت)

۲۔ تبرید النواظر 

۳۔ ازالۃ الریب 

۴۔ مسئلہ علم غیب وحاضر وناظر

۵۔ درود شریف پڑھنے کا شرعی طریقہ (ای الطریقۃ الشرعیۃ للصلوۃ علی النبی صلی اللہ علیہ وسلم) وقد ھدی اللہ کثیرا من الشباب بعد قراء ۃ ہذا الکتاب۔

۶۔ ارشاد الشیعۃ 

فیہ اجوبۃ عن الشبہات التی یقدمھا الشیعۃ علی الصحابۃ رضی اللہ عنہم، وعلی اہل السنۃ والجماعۃ لو قرا الشیعۃ من غیر تعصب لکان لہ طریق الھدایۃ۔

۷۔ احسن الکلام فی ترک القراء ۃ خلف الامام 

۸۔ ینابیع (مسئلۃ التراویح)

یوجد بعض الطوائف الذین یھتمون بالفروع الفقہیۃ اکثر من المبادئ فیتسببون التنافر بین جماعۃ المسلمین فرد علیہم فی ہذین الکتابین۔

۹۔ عیسائیت کا پس منظر ای ’’ خلفیۃ المسیحیۃ‘‘ کشف فیہ عن حقیقۃ المسیحیۃ واجاب من الوساوس التی یستعملہا المنصرون لاضلال المسلمین۔ 

۱۰۔ مقام ابی حنیفہ، ذکر فیہ من مناقب الام ابی حنیفۃ رحمہ اللہ تعالی ورد فیہ علی الشبہات التی یقدمہا المخالفون۔

۱۱۔ انکار حدیث کے نتائج (نتائج انکار الحدیث)

۱۲۔ شوق حدیث( شوق الحدیث) بین فیھا حب الحدیث وفضیلتہ واہمیتہ، واسکت منکری الحدیث۔

۱۳۔ صرف ایک اسلام (اسلام واحد فقط) رد فیہ علی منکرالحدیث غلام جیلانی برق الذی کتب ’’دو اسلام‘‘ واورد فیہ شبہات حول عدد من متون الاحادیث۔ ثم ان غلام جیلانی برق ہداہ االلہ فتاب عن انکارالحدیث ودخل فی اہل السنۃ والجماعۃ۔ 

۱۴۔ تسکین الصدور

۱۵۔ سماع الموتیٰ

رد فیہ علی من ینکر سماع الموتی وحیاۃ النبی صلی اللہ علیہ وسلم فی قبرہ الشریف ورد علی الشبہات حول ہذہ الموضوع۔

جہودہ الاجتماعیۃ: 

کان رحمہ اللہ تعالی مع اعمالہ التدریسیۃ والاصلاحیۃ یشارک الحرکات الاسلامیۃ التی کانت لصالح ہذہ الامۃ فشارک جمعیۃ علماء الھند فی حرکتہا ضد الاستعمار لتحریر الھند، کما شارک حرکۃ تحکیم الشریعۃ الاسلامیۃ فی باکستان، وشارک حرکات ختم النبوۃ التی کانت تطالب حکومۃ باکستان باصدار قانون باعتبار ’’القادیانیۃ‘‘ اقلیۃ غیر مسلمۃ وعند مشارکتہ مع ہذہ الحرکۃ سنۃ ۱۹۵۳م وسنۃ ۱۹۷۳م دخل السجن وبقی فیہ شہوراً۔ وقد کتب ثلاثۃ کتب فی رد القادیانیۃ:

۱۔ عقیدۃ ختم نبوت قرآن وسنت کی روشنی میں ( عقیدۃ ختم النبوۃ فی ضوء الکتاب والسنۃ) 

۲۔ توضیح المرام فی نزول المسیح علیہ السلام

۳۔ چراغ کی روشنی ( ضوء السراج فی تحقیق مسئلۃ المعراج)

ومما یدل علی اہتمامہ بقضیۃ ختم النبوۃ انہ ارسل رسالۃ لموتمر ختم النبوۃ فی مسجد شاہی (المسجد الملکی) فی لاہور، وقراھا نجلہ الفاضل الشیخ عبدالقدوس قارن امام الملایین من الحاضرین وقال فیہ:

’’ علی جمیع تلامیذی والمریدین والمتعلقین ان یتعاونوا مع ’’مجلس تحفظ ختم النبوۃ‘‘ لانہا جماعۃ اسسھا مشایخنا واننی انصح الجمیع وآمرھم بھذا‘‘

وھذہ ہی الرسالۃ التی اعلنھا الشیخ عبدالحق خان بشیر عند جنازتہ قبل الصلاۃ۔

تواضعہ وشفقتہ علی العلماء: 

کان فضیلۃالشیخ رحمہ اللہ تعالی مع غزارۃ علمہ، وعظیم منزلتہ بین العلماء فی غایۃ التواضع، یری نفسہ کاحد من الناس، فعند ما لقیہ العلماء بلقب ’’امام اہل السنۃ‘‘ قال: نعم، انا امام اہل السنۃ بمعنی ’’ انا امام فی مسجد اہل السنۃ‘‘۔

کان رحمہ اللہ تعالی شفیقا علی العلماء، یقابلہم بغایۃ البشاشۃ والرحمۃ، ویسالہم عن اعمالہم، ویرشدھم ویدعو لہم۔ وقبل وفاتہ بایام کان ھناک اجتماع مجلس الشوری لمجلس تحفظ ختم النبوۃ فی ’’کندیاں شریف‘‘ تحت اشراف امیر المجلس فضیلۃ الشیخ خواجہ خان محمد دامت برکاتہم، وکان سفرنا عن طریق لاہور، واخبرنی الزملاء فضیلۃ الشیخ سعید احمد جلال بوری وغیرہ من الاخوان اننا قررنا فی سفرنا ہذا زیارۃ امام اھل السنۃ فضیلۃ الشیخ محمد سرفراز خان صفدر رحمہ اللہ تعالی ففرحت جدا، وحضرنا فی بیتہ، وھو علی فراشہ فی غایۃ الضعف، ومع ذلک رحب بنا، وفرح بھذہ الزیارۃ، وبدا یسال عن الاحوال، وامر احد اولادہ باکرام الضیوف وطلبنا منہ الدعاء، فرفع یدیہ ودعا لنا جمیعا ثم صافحناہ وقبلنا یدیہ وودعناہ وھو ینظر، ومن کا ن ید ری ان ہذا آخر اللقاء؟ 

وقبل ہذا فی جمادی الاولی ۱۴۲۴ھ الموافق یولیو سنۃ ۲۰۰۳م لما حضر رحمہ اللہ تعالی فی کراتشی فی بیت المفتی محمد جمیل خان الشہید، کنت ازورہ ویزورہ العلماء ویسالونہ عن المسائل العلمیۃ فیجیب، فتعجب احد الحاضرین من ذاکرتہ فی ہذا العمر ومع ہذا المرض والضعف، فقلت لہ: ہذا ببرکۃ دعاء النبی صلی اللہ علیہ وسلم: ’’نضراللہ امرء ا سمع مقالتی فوعا ھا ثم اداھا کما سمع‘‘ الحدیث (سنن الترمذی: ۲؍۹۰)

الدروس والعبر: 

فی حیاۃ امام اہل السنۃ الشیخ سرفراز خان صفدردروس وعبرللعلماء وطلاب العلم، من اھمھا: 

۔ الجھدالمتواصل والمثابرۃ علی طلب العلم، ثم الجہد المتواصل لنشر ہذا العلم والمواظبۃ علی المواعید،

۔ الاھتمام بتوعیۃ الشعب المسلم علی التوحید وعلی التمسک بتعالیم الکتاب والسنۃ، والبعد عن الشرک والبدعات، بالحکمۃ والموعظۃ الحسنۃ،

۔ التخلق باخلاق الاسلام وآدابہ،

۔ التمسک بطریق السلف الصالح۔

واخیرا عزاؤنا وعزاء اسرۃ الجامعۃ الی ابناء امام اہل السنۃ واسرتہ الروحیۃ العلماء۔

العین تدمع والقلب یحزن وانا بفراقک یا شیخنا لمحزونون، ولانقول الا بما یرضی بہ ربنا تبارک وتعالی۔

اللھم اغفرلہ وارحمہ واعف عنہ، واکرم نزلہ، ووسع مدخلہ، اللھم ادخلہ الجنۃ بغیر حساب، اللھم لاتحرمنا اجرہ، ولاتفتنا بعدہ، آمین۔

وصلی اللہ علی سیدنا محمد وآلہ وصحبہ اجمعین۔

شخصیات

جولائی تا ستمبر ۲۰۰۹ء

جلد ۲۰ ۔ شمارہ ۷ تا ۱۰

گر قبول افتد زہے عز و شرف
محمد عمار خان ناصر

ہم نے تمام عمر گزاری ہے اس طرح (۱)
مولانا محمد سرفراز خان صفدرؒ

ہم نے تمام عمر گزاری ہے اس طرح (۲)
مولانا محمد سرفراز خان صفدرؒ

حضرت شیخ الحدیثؒ کے اساتذہ کا اجمالی تعارف
مولانا محمد یوسف

امام اہل سنتؒ کے چند اساتذہ کا تذکرہ
مولانا قاضی نثار احمد

گکھڑ میں امام اہل سنت کے معمولات و مصروفیات
قاری حماد الزہراوی

امام اہل سنت رحمۃ اللہ علیہ کا تدریسی ذوق اور خدمات
مولانا عبد القدوس خان قارن

امام اہل سنت رحمہ اللہ کی قرآنی خدمات اور تفسیری ذوق
مولانا محمد یوسف

امام اہل سنت رحمہ اللہ کی تصانیف: ایک اجمالی تعارف
مولانا عبد الحق خان بشیر

امام اہل سنتؒ کی تصانیف اکابر علما کی نظر میں
حافظ عبد الرشید

حضرت شیخ الحدیث رحمہ اللہ اور دفاعِ حدیث
پروفیسر ڈاکٹر محمد اکرم ورک

منکرینِ حدیث کے شبہات کے جواب میں مولانا صفدر رحمہ اللہ کا اسلوبِ استدلال
ڈاکٹر محمد عبد اللہ صالح

’’مقام ابی حنیفہ‘‘ ۔ ایک علمی و تاریخی دستاویز
ڈاکٹر انوار احمد اعجاز

’’عیسائیت کا پس منظر‘‘ ۔ ایک مطالعہ
ڈاکٹر خواجہ حامد بن جمیل

حضرت شیخ الحدیث رحمہ اللہ کی تصانیف میں تصوف و سلوک کے بعض مباحث
حافظ محمد سلیمان

سنت اور بدعت ’’راہ سنت‘‘ کی روشنی میں
پروفیسر عبد الواحد سجاد

مولانا محمد سرفراز خان صفدر رحمہ اللہ کا انداز تحقیق
ڈاکٹر محفوظ احمد

مولانا محمد سرفراز خان صفدر کا اسلوب تحریر
نوید الحسن

امام اہل سنت رحمہ اللہ کا شعری ذوق
مولانا مومن خان عثمانی

حضرت والد محترمؒ سے وابستہ چند یادیں
مولانا ابوعمار زاہد الراشدی

شمع روشن بجھ گئی بزم سخن ماتم میں ہے
قاضی محمد رویس خان ایوبی

والد محترم کے ساتھ ایک ماہ جیل میں
مولانا عبد الحق خان بشیر

پیکر علم و تقویٰ
مولانا شیخ رشید الحق خان عابد

دو مثالی بھائی
مولانا حاجی محمد فیاض خان سواتی

حضرت والد محترمؒ کے آخری ایام
مولانا عزیز الرحمٰن خان شاہد

میرے بابا جان
ام عمران شہید

ذَہَبَ الَّذِیْنَ یُعَاشُ فِیْ اَکْنَافِہِمْ
اہلیہ قاری خبیب

اب جن کے دیکھنے کو اکھیاں ترستیاں ہیں
ام عمار راشدی

ابا جیؒ اور صوفی صاحبؒ ۔ شخصیت اور فکر و مزاج کے چند نمایاں نقوش
محمد عمار خان ناصر

قبولیت کا مقام
مولانا محمد عرباض خان سواتی

جامع الصفات شخصیت
مولانا قاری محمد ابوبکر صدیق

ایک استاد کے دو شاگرد
حافظ ممتاز الحسن خدامی

داداجان رحمہ اللہ ۔ چند یادیں، چند باتیں
حافظ سرفراز حسن خان حمزہ

کچھ یادیں، کچھ باتیں
حافظ محمد علم الدین خان ابوہریرہ

اٹھا سائبان شفقت
حافظ شمس الدین خان طلحہ

ملنے کے نہیں نایاب ہیں ہم
ام عفان خان

نانا جان علیہ الرحمہ کی چند یادیں
ام ریان ظہیر

میرے دادا جی رحمۃ اللہ علیہ
ام حذیفہ خان سواتی

میرے شفیق نانا جان
ام عدی خان سواتی

وہ سب ہیں چل بسے جنہیں عادت تھی مسکرانے کی
بنت قاری خبیب احمد عمر

بھولے گا نہیں ہم کو کبھی ان کا بچھڑنا
بنت حافظ محمد شفیق (۱)

دل سے نزدیک آنکھوں سے اوجھل
اخت داؤد نوید

مرنے والے مرتے ہیں لیکن فنا ہوتے نہیں
بنت حافظ محمد شفیق (۲)

شیخ الکل حضرت مولانا سرفراز صاحب صفدرؒ
مولانا مفتی محمد تقی عثمانی

نہ حسنش غایتے دارد نہ سعدی را سخن پایاں
مولانا مفتی محمد عیسی گورمانی

امام اہل سنت کی رحلت
مولانا محمد عیسٰی منصوری

امام اہلِ سنتؒ کے غیر معمولی اوصاف و کمالات
مولانا سعید احمد جلالپوری

حضرت مولانا محمد سرفراز خاں صفدرؒ کا سانحۂ ارتحال
مولانا مفتی محمد زاہد

علم و عمل کے سرفراز
مولانا سید عطاء المہیمن بخاری

اک شمع رہ گئی تھی سو وہ بھی خموش ہے
مولانا محمد جمال فیض آبادی

چند منتشر یادیں
مولانا محمد اسلم شیخوپوری

اک چراغ اور بجھا اور بڑھی تاریکی
پروفیسر غلام رسول عدیم

چند یادگار ملاقاتیں
پروفیسر ڈاکٹر علی اصغر چشتی

امام اہل سنتؒ: چند یادیں، چند تأثرات
حافظ نثار احمد الحسینی

ایک عہد ساز شخصیت
پروفیسر ڈاکٹر حافظ محمود اختر

پروانے جل رہے ہیں اور شمع بجھ گئی ہے
مولانا ظفر احمد قاسم

وما کان قیس ہلکہ ہلک واحد
حضرت مولانا عبد القیوم حقانی

ہم یتیم ہوگئے ہیں
مولانا محمد احمد لدھیانوی

میرے مہربان مولانا سرفراز خان صفدرؒ
ڈاکٹر حافظ محمد شریف

مثالی انسان
مولانا ملک عبد الواحد

وہ جسے دیکھ کر خدا یاد آئے
مولانا داؤد احمد میواتی

دو مثالی بھائی
مولانا گلزار احمد آزاد

امام اہل سنت رحمۃ اللہ علیہ چند یادیں
مولانا محمد نواز بلوچ

میرے مشفق اور مہربان مرشد
حاجی لقمان اللہ میر

مت سہل ہمیں جانو
ڈاکٹر فضل الرحمٰن

حضرت مولانا سرفراز صفدرؒ اور مفتی محمد جمیل خان شہیدؒ
مفتی خالد محمود

شیخ کاملؒ
مولانا محمد ایوب صفدر

اولئک آبائی فجئنی بمثلھم
مولانا عبد القیوم طاہر

چند یادیں اور تاثرات
مولانا مشتاق احمد

باتیں ان کی یاد رہیں گی
صوفی محمد عالم

یادوں کے گہرے نقوش
مولانا شمس الحق مشتاق

علمائے حق کے ترجمان
مولانا سید کفایت بخاری

دینی تعلق کی ابتدا تو ہے مگر انتہا نہیں
قاری محمد اظہر عثمان

امام اہل سنت مولانا سرفراز خان صفدر
مولانا الطاف الرحمٰن

امام اہل سنتؒ اور ان کا پیغام
حافظ محمد عامر جاوید

ایک شخص جو لاکھوں کو یتیم کر گیا
مولانا عبد اللطیف قاسم چلاسی

تفسیر میں امام اہل سنتؒ کی بصیرت : ایک دلچسپ خواب
ڈاکٹر محمد حبیب اللہ قاضی

امام اہل سنتؒ ۔ چند ملاقاتیں
حافظ تنویر احمد شریفی

مجھے بھی فخر ہے شاگردئ داغِؔ سخن داں کا
ادارہ

سماحۃ الشیخ سرفراز خان صفدر علیہ الرّحمۃ ۔ حیاتہ و جہودہ الدینیۃ العلمیّۃ
ڈاکٹر عبد الماجد ندیم

امام اہل السنۃ المحدث الکبیر ۔ محمد سرفراز خان صفدر رحمہ اللہ
ڈاکٹر عبد الرزاق اسکندر

العلامۃ المحدث الفقیہ الشیخ محمد سرفراز خان صفدر رحمہ اللہ
ڈاکٹر محمد اکرم ندوی

محدث العصر، الداعیۃ الکبیر الشیخ محمد سرفراز صفدر رحمہ اللہ
مولانا طارق جمیل

امام اہل سنتؒ کے عقائد و نظریات ۔ تحقیق اور اصول تحقیق کے آئینہ میں
مولانا عبد الحق خان بشیر

حضرت شیخ الحدیث رحمہ اللہ کا منہج فکر اور اس سے وابستگی کے معیارات اور حدود
محمد عمار خان ناصر

درس تفسیر حضرت مولانا سرفراز خان صفدر ۔ سورۂ بنی اسرائیل (آیات ۱ تا ۲۲)
محمد عمار خان ناصر

حضرات شیخین کی چند مجالس کا تذکرہ
سید مشتاق علی شاہ

خطبہ جمعۃ المبارک حضرت مولانا سرفراز خان صفدرؒ
مولانا محمد سرفراز خان صفدرؒ

امام اہل سنت رحمہ اللہ کے دلچسپ واقعات
مولانا محمد فاروق جالندھری

حفظ قرآن اور دورۂ حدیث مکمل کرنے والے طلبہ سے امام اہل سنتؒ کا ایک ایمان افروز تربیتی خطاب
مولانا محمد سرفراز خان صفدرؒ

تعلیم سے متعلق ایک سوال نامہ کا جواب
مولانا محمد سرفراز خان صفدرؒ

امام اہل سنتؒ کی فارسی تحریر کا ایک نمونہ
مولانا محمد سرفراز خان صفدرؒ

امام اہل سنتؒ کے منتخب مکاتیب
مولانا محمد سرفراز خان صفدرؒ

ہمارے پیر و مرشد
محمد جمیل خان

امام اہل سنت کے چند واقعات
سید انصار اللہ شیرازی

تعزیتی پیغامات اور تاثرات ۔ بسلسلہ وفات حضرت مولانا سرفراز خان صفدرؒ
ادارہ

حضرت شیخ الحدیثؒ کی وفات پر اظہار تعزیت کرنے والے مذہبی و سیاسی راہ نماؤں کے اسمائے گرامی
ادارہ

مسئلہ حیات النبی صلی اللہ علیہ وسلم اور متوازن رویہ
مولانا ابوعمار زاہد الراشدی

امام اہل سنتؒ کے علمی مقام اور خدمات کے بارے میں حضرت مولانا محمد حسین نیلویؒ کی رائے گرامی
ادارہ

امام اہل سنت رحمہ اللہ کا دینی فکر ۔ چند منتخب افادات
مولانا محمد سرفراز خان صفدرؒ

حضرت مولانا سرفراز خان صفدرؒ ۔ شجرۂ نسب سلسلہ نقشبندیہ مجددیہ
ادارہ

سلسلہ نقشبندیہ میں حضرت شیخ الحدیثؒ کے خلفاء
ادارہ

آہ! اب رخصت ہوا وہ اہل سنت کا امام
محمد عمار خان ناصر

اے سرفراز صفدر!
مولوی اسامہ سرسری

ان کو ڈھونڈے گا اب تو کہاں راشدی
مولانا ابوعمار زاہد الراشدی

امام اہل سنت قدس سرہ
مولانا غلام مصطفٰی قاسمی

حضرت مولانا سرفراز خان صفدرؒ کی یاد میں
مولانا منظور احمد نعمانی

مضی البحران صوفی و صفدر
حافظ فضل الہادی

علم کی دنیا میں تو ہے سربلند و سرفراز
ادارہ

قصیدۃ الترحیب
ادارہ

خطیب حق بیان و راست بازے
محمد رمضان راتھر