العلامۃ المحدث الفقیہ الشیخ محمد سرفراز خان صفدر رحمہ اللہ

ڈاکٹر محمد اکرم ندوی

ھو شیخنا المجیز العلامۃ المحدث الفقیہ الداعیۃ امام اھل السنۃ والجماعۃ الشیخ ابوزاھد محمد سرفراز خان صفدر بن نور احمد خان بن کل احمد خان بن المولوی کل خان، من قبیلۃ خوانین یوسف زئی، بقیۃ الصالحین، وخاتمۃ الفقھاء المحدثین، وعلم من اکابر اعلام العصر الربانیین، وقدوۃ صالحۃ موھوبۃ، ومن اشھر العلماء الداعین المصلحین۔

مولدہ: 

ولد سنۃ ثلاث وثلاثین واربع ماءۃ والف فی قریۃ جیران دھکی، من مدیریۃ مانسھرہ ھزارہ۔ 

طلبہ: 

قرا القرآن الکریم علی ابن عمتہ الشیخ السید فتح علی شاہ، واخذ مبادئ الاسلام، والمقدمۃ الشھیرہ فی النحو باللغۃ الفارسیۃ ’’نحو میر‘‘ عن الشیخ غلا م غوث الھزاروی۔ واختلف الی الشیوخ والعلماء والمدارس المختلفۃ فی سبیل طلب العلم، واحتمل فی سبیل الطلب مشاق ومصاعب تذکر بحیاۃ سلفنا الصالح من المحدثین والفقھاء، واخذ علم التصریف، و نورالایضاح فی الفقہ الحنفی عن الشیخ سخی شاہ، وشیئا من ’’نحو میر‘‘ عن الشیخ احمد نبی، ودرس کتبا فی الصرف علی الشیخ عبد العزیز فی خانبور، واشیاء علی الشیخ عبد الواحد المعروف بالعرب، والمعلقات السبع، وشرح الملا جامی علی کافیۃ النحو، والرسالۃ القطبیۃ فی المنطق علی الشیخ اسحاق الرحمانی، والمیبذی علی الشیخ ولی اللہ، ورسالۃ فی علم الفرائض علی مؤلفھا الشیخ عبدالعلیم، ومسلم الثبوت ومختصر المعانی وحاشیتی عبد الغفور وحمداللہ علی الشیخین غلام محمد اللدھیانوی والشیخ عبدالخالق المظفرکرھی۔ 

والتحق بمدرسۃ انوار العلوم بکجرانوالہ، ودرس بھا ھدایۃ الفقہ للمرغینانی، والتوضیح والتلویح، وتفسیر البیضاوی، والشمس البازغۃ، وشرح نخبۃ الفکر، ومشکاۃ المصابیح علی الشیخ عبدالقدیر الکیملبوری، والمطول ورسالۃ السراجی فی الفرائض علی الشیخ المفتی عبدالواحد۔

والتحق بدارالعلوم بدیوبند سنۃ ۱۹۴۰، وتخرج بھا سنۃ ۱۹۴۱، فسمع بھا صحیح البخاری، وجامع ابی عیسی علی الشیخ الامام السید حسین احمد المدنی، وصحیح مسلم علی الشیخ محمد ابراھیم البلیالوی، وسنن ابی داود والشمائل المحمدیۃ لابی عیسی علی الشیخ محمد اعزاز علی، وسنن النسائی علی الشیخ السید عبد الحق نافع کل کاکا خیل، وسنن ابن ماجہ علی الشیخ المفتی ریاض الدین والشیخ ابی الوفاء الشاھجھانفوری، والموطا روایۃ یحیی اللیثی علی الشیخ محمد ادریس الکاندھلوی، والموطا روایۃ محمد ابن الحسن الشیبانی علی العلامۃ ظھور احمد الدیوبندی، وشرح معانی الاثار لابی جعفر الطحاوی علی الشیخ المفتی محمد شفیع الدیو بندی۔ واجازہ الشیخ الامام حسین احمد المدنی اجازۃ عامۃ سنۃ ۱۹۴۱، ولقبہ ’’صفدر‘‘ وقابل بدیوبند الشیخ عبیداللہ السندھی واستمع الی بعض محاضراتہ۔ وحضر سنۃ ۱۹۸۰فی مھرجان دارالعلوم بدیوبند علی مرور ماءۃ سنۃ من انشاءھا، ونال الاکرام۔

اخذہ للطریقۃ: 

اخذ الطریقۃ من الشیخ حسین علی بوان بجران، وصحبہ واخذ عنہ شیئا من تفسیر القرآن الکریم، واجازہ فی التفسیر والحدیث والطریقۃ النقشبندیۃ۔ ان اجازتہ من الشیخ حسین علی الراوی عن العلامۃ الامام رشید احمد الکنکوھی اجازۃ عزیزۃ نادرۃ، فلا اعرف احدا من شیوخی یروی عن الشیخ حسین علی، فھذہ مفخرۃ کبیرۃ لشیخنا ابی زاھد یجب ان تذکر وتؤثر۔

حجہ: 

حج بیت اللہ الحرام سنۃ ۱۹۶۸، وزار فی الرحلۃ نفسھا دمشق، ثم حج سنۃ ۱۹۷۲۔ ثم فی سنۃ ۱۹۹۰، واعتمر سنۃ ۲۰۰۲، ثم حج سنۃ ۲۰۰۳، ثم اعتمر سنۃ ۲۰۰۶م۔

رحلاتہ: 

رحل فی سبیل العلم و الدعوۃ الی دیو بند، وکلکتا، واجمیر، ولاھور، ودھاکہ، وکوئتہ، والحجاز ، وبلاد الشام ، والامارات العربیۃ المتحدۃ ، وافغانستان، وبریطانیا ، وجنوب افریقیا، وغیرھا من البلدان۔

التدریس والنشاط التعلیمی: 

درس بمدرسۃ انوارالعلوم بکجرانوالہ سنۃ ۱۹۴۲، وعین سنۃ ۱۹۴۳م اماما فی جامع اھل السنۃ والجماعۃ ببوھر والی ککر، والقی محاضرات فی تفسیر القرآن الکریم فی بعض المعاھد الحدیثۃ الحکومیۃ۔ وبدا التدریس فی مدرسۃ نصرۃ العلوم بکجرانوالہ فی شوال سنۃ۱۳۷۴ھ، وعمل عضوا فی وفاق المدارس العربیۃ بباکستان، وعین سنۃ ۱۹۵۸ رئیسا للمدرس وامینا للشؤون التعلیمیۃ فی مدرسۃ نصرۃ العلوم ، وعین شیخ الحدیث بھا سنۃ ۱۹۶۰، ودرس بھا صحیح البخاری، وجامع التر مذی ،وتفسیر القرآن الکریم۔

عرف بمواظبتہ علی الدروس، والتزامہ الشدید بالمواقیت، ولم یکن یاخذ اجازۃ من المدرسۃ، وکان یقول : مذھبی ان العطلۃ لا تجوز۔

تلامذتہ: 

تخرج علیہ آلاف من العلماء فی باکستان وغیرھا، واخذ عنہ جماعۃ کبیرۃ، کما استجازہ عدد کبیر، منھم صاحبنا المسند محمد بن عبداللہ الرشید مؤلف (امدادالفتاح) وکاتب ھذہ السطور۔ ولعل اکبر تلامذتہ واشھر ھم علی الاطلاق نجلہ و خلیفتہ شیخنا العلامۃ محمد زاھد الراشدی الذی فاق علماء عصرہ بالسعۃ والرسوخ فی العلم، ونفاذ البصیرۃ، واتقاد القریحۃ، والجمع بین العلوم الاسلامیۃ ومطالب العصر، فھو رحمۃ من اللہ تعالی علی امۃ نبیہ صلی اللہ علیۃ و سلم فی عصر تموج فیہ الفتن وتتضارب فیہ اآارا ء والافکار، وابتلی فیہ کل ذی رای باعجاب رایہ، فیا لیت علماء زماننا اتبعوہ فی التیسیر علی الناس، واجتنبوا الخلاف والجدال فی الدین، اللھم متعنا بطول بقاۂ۔

وکذالک من اھم ورثۃ علومہ وافکارہ حفیدہ العلامۃ المحقق البحاثۃ الشاب عمار ناصر، فقد اطلعت علی بعض کتاباتہ، فاعجبنی منھجہ فی التحقیق، واسلوبہ فی الکتابۃ، وارجو منہ ان یعیر عنایۃ اکبر بالحدیث النبوی الشریف، فانہ کالمصباح فی الفتن، اللھم اجعلنا من متبعی الآثار، وجنبنا الاعجاب بالارآء والخلاف والجدال، آمین یا رب العالمین۔

کتاباتہ: 

دبج یراعہ کتبا علمیۃ قیمۃ مؤیدۃ بالادلۃ والبراھین، وحافلۃ بالتحقیقات النادرۃ والبحوث القیمۃ، وکتب مالا یحصی من المقالات فی عدد من مجلات باکستان من سنۃ ۱۹۴۳ الی ۱۹۹۰م۔

یقول ابنہ شیخنا محمد زاھد الراشدی فی تعریفہ بمؤلفاتہ : ’’قد انعم اللہ تعالی علی ابینا شیخ الحدیث محمد سرفراز خان صفدر بعنایۃ خاصۃ بالدراسۃ والتحقیق، والدفاع عن منھاج اھل الحق والصواب، تشھد مؤلفاتہ العلمیۃ التی تربو علی الثلاثین بتمکنۃ وشمول علمہ وعمقہ‘‘ (۱) 

النشاط السیاسی: 

ظل عضوا نشیطا فی مجلس احرار الاسلام منذ سنۃ ۱۹۳۵ الی سنۃ ۱۹۴۵، وسافر سنۃ ۱۹۴۱من دیوبند الی لاھور حیث حضر مؤتمر جمعیۃ علماء الھند۔ ونشط فی حرکۃ ختم النبوۃ ، وقضی تسعۃ شھور فی معتقل ملتان حیث الف (صرف ایک اسلام بجواب دو اسلام) وقام فی السجن بتدریس الموطا ، وحجۃ اللہ البالغۃ للامام ولی اللہ الدھلوی، و شرح نخبۃ الفکر ، والھدایۃ فی الفقہ الحنفی۔

وعمل عضوا فی جمیعۃ علماء الھند ، ثم فی جمعیۃ علماء الاسلام سنۃ ۱۹۵۶، وظل الی فترۃ طویلۃ عضوا فی مجلسھا الاستشاری المرکزی ، وامیرا لفرعھا فی کجرانوالہ ، عضوا فی المجلس الاستشاری لجمعیۃ اشاعۃ التوحید والسنۃ ، ورئیسا لجمعیۃ اھل السنۃ بکجرانوالہ۔ واشترک فی نشاط فی حرکۃ اقامۃ نظام المصطفی صلی اللہ علیہ و سلم، واعتقل وبقی فی السجن لمدۃ شھر۔ 

حیاتہ العائلیۃ: 

تزوج سنۃ ۱۹۴۵ من سکینۃ بنت الشیخ محمد اکبر راجبوت من کجرانوالہ، ولدت لہ منھا سلمی وھی اکبر اولادہ، ثم ولد لہ منھا شیخنا العلامۃ المحقق الحافظ عبدالمتین خان زاھد الراشدی، وبہ یکتنی، والشیخ المقری عبدالقدوس خان قارن، والعالمۃ الحافظۃ سعیدۃ، والشیخ الحافظ عبدالحق خان بشیر۔

وتزوج فی الثالث من رجب سنۃ ۱۳۷۱ من زبیدۃ بنت فیروز خان من مانسھرہ، وولد لہ منھا الحافظ محمد اشرف خان، والحافظۃ طاھرۃ، والشیخ الحافظ المقری شرف الدین خان حامد المعروف بحماد الزھراوی، والشیخ الحافظ المقری رشید الحق خا ن عابد ، والشیخ الحافظ المقری عزیز الرحمان خان شاھد، والحافظ المقری عنایۃ الوھاب خان ساجد، والشیخ الحافظ المقری منھاج الحق خان راشد۔ وعنی بتربیۃ اولادہ تربیۃ دینیۃ ، وتخریجھم علماء عاملین۔

وفاتہ: 

قضی شیخنا العلامۃ حیاۃ حافلۃ باعمال جلیلۃ فی مجال التعلیم والتالیف، والدعوۃ والاصلاح حتی وافاہ اجل اللہ لیلۃ الثلاثاء تاسع جمادی الاولی سنۃ ۱۴۳۰ھ عن عمر یناھز ثمانیا وتسعین عاما ، وصلی علیہ بوصیۃ منہ ابنہ الاکبر وخلیفتہ شیخنا العلامۃ محمد زاھد الراشدی، وشھد جنازتہ جمع کبیر من العلماء والمشایخ وعامۃ المسلمین، وعم الناس من الحزن والاسی ما اللہ بہ علیم ، وقال ابنہ الشیخ محمد زاھدالراشدی وھو یبدی حزنہ علیہ: ’’لقد حرمت ابا کریما ، واستاذا جلیلا ، ودعوات شیخ کامل‘‘۔

کانت وفاتہ فاجعۃ یالھا من فاجعۃ عمت المسلمین علی اختلاف مذاھبہم وطبقاتھم ، وبعد اقطارھم واوطانھم فی مشارق الارض ومغاربھا، وصدمت السنۃ واھلھا اجمعین۔

اخلاقہ: 

عرف فی الناس بمکارم اخلاقہ من الجود والسخاء ، والصدق والصفاء ، والانبساط للناس، والتواضع، واکرام للضیوف، قال احد تلامذتہ الشیخ بیر محمد سلطان محمود :’’لم اعھد فی حیاتی من یماثلہ فی المحبۃ والشفقۃ‘‘۔

وقال ابنہ محمد زاھد الراشدی :’’قضی ابونا حیاتہ فی اتباع السنۃ ،واقتفاء مذھب سلفہ‘‘،

مکانتہ: 

کان من کبار علماء عصرہ، مضطلعا فی علم التفسیر، متمکنا فی علو م الحدیث واسماء الرجال، مقدما فی الفقہ الحنفی، داعیا الی اقامۃ السنن، واماتۃ البدع، جامعا بین العلم والعمل، متصفا بالزھد والتقوی والورع، ومقیما للصلوات ،وشجاعا فی الجھر بکلمۃ الحق، لایخاف فی اللہ لومۃ لائم۔ 

کان یعتبر ترجمانا لمذہب اہل السنۃ والجماعۃ علی طریقۃ علماء دیوبند الاکابر ولقبہ کبار علماء باکستان فی اجتماع کبیر سنۃ ۱۹۹۲م فی مدینۃ کراتشی بلقب ( امام اہل السنۃ ) ۔ 

یقول حفیدہ الاستاذ محمد عمار خا ن ناصر : ’’کانت حیاۃ جدنا المکرم وشیخنا المبجل محمد سرفراز خان صفدر عبارۃ عن تدریس العلوم الدینیۃ، والاضطلاع من مصادر القرآن الکریم، والحدیث النبوی الشریف، والفقہ، والتاریخ والسیرۃ، ویشھد بسعۃ نظرہ، واطلاعہ علی دقائق العلوم الدینیۃ، ومعرفتہ لارآء العلماء الاعلام کل من سنحت لہ فرصۃ دراسۃ مؤلفاتہ حول المواضیع المختلفۃ‘‘۔ (۲) 

کان رحمہ اللہ تعالیٰ فرید عصرہ، ونسیج وحدہ، کان مرجع الانام فی مشاکلھم، وموئل العلماء فی مھامھم، تشد الیہ الرحال، بصیرا بدقائق کتاب اللہ، عارفا بمعانیہ وتاویلاتہ، قائما بحقوقہ، تالیا لہ آناء الیل وآناء النھار، متبعا لسنن المصطفیٰ صلی اللہ علیہ وسلم، ومقتفیا لآثارہ، وباحثا محققا، متین الدیانۃ، اسوۃ الصالحین، وقدوۃ العباد الزاھدین، وقد سارت بفضائلہ وعلو مہ الرکبان، وانتشرت کتبہ وتوالیفہ فی الافاق۔ فلما مات ۔رحمہ اللہ تعالیٰ ۔خسرنا علما کبیرا وقدوۃ عظیمۃ واسوۃ جلیلۃ ۔

سندہ فی الحدیث الشریف: 

اخبرنا المحدث الفقیہ الشیخ سرفراز خان صفدر ، اخبرنا الشیخ حسین علی ، وشیخ الاسلام السید حسین احمد المدنی ، الاول عن العلامۃ الامام رشید احمد الکنکوھی ، والثانی عن العلامۃ محمود حسن الدیوبندی ، والشیخ خلیل احمد السھارنفوری ، والشیخ حسب اللہ المکی الشافعی ، والشیخ عبدالجلیل برادۃ المدنی ، والشیخ عثمان عبدالسلام الداغستانی ، والسید احمد البرزنجی ، سبعتھم عن محدث المدینۃ المنورۃ عبدالغنی بن ابی سعید المجددی ، انا الامام اسحاق الدھلوی ، انا جدی لامی العلامۃ المحدث عبدالعزیز بن احمد بن عبدالرحیم الدھلوی ، انا والدی الامام احمد ابن عبد الرحیم الدھلوی،انا سالم بنعبداللہ بن سالم البصری ، انا والدی عبداللہ بن سالم البصری الحافظ، انا محمد بن علاء الدین البابلی الحافظ ، انا الشمس محمد الرملی ، انا القاضی زکریا الانصاری م انا الحافظ ابن حجر العسقلانی ، انا البرھان ابو اسحاق ابراھیم ابن احمد التنوخی ، انا ابو العباس احمد بن ابی طالب الحجار، انا ابو عبداللہ الحسین بن المبارک الزبیدی ، انا ابو الوقت عبدالاول بن عیسی الھروی ،ثنا الامام ابو الحسن عبدالرحمن بن محمد بن المظفع الداوودی ، ثنا الحافظ ابو محمد عبداللہ بن حمویہ السرخسی ، ثنا ابو عبداللہ محمد بن یوسف بن مطر الفربری ، قال : حدثنا الحفظ ابو عبداللہ محمد اسماعیل الجعفی ، قال : حدثنا اسماعیل بن ابی اویس قال حدثنی مالک عن ھشام بن عروۃ عن ابیہ عن عبداللہ بن عمرو بن العاص قال سمعت رسو ل اللہ صلی اللہ علیہ وسلم یقول ان اللہ لا یقبض العلم انتزاعا ینتزعہ من العباد ولکن یقبض العلم بقبض العلماء حتی اذا لم یبق عالما اتخذ الناس رؤوسا جھالا فسئلوا فافتوا بغیر علم فضلوا واضلوا۔ (۳) 

قال الحافظ ابن حجر فی شرحہ لھذا الحدیث :’’وکان تحدیث النبی صلی اللہ علیہ وسلم بذالک فی حجۃ الوداع کما رواہ احمد والطبرانی من حدیث ابی امامۃ قال : لما کان فی حجۃ الوداع قال النبی صلی اللہ علیہ وسلم :’’خذو االعلم قبل ان یقبض او یرفع‘‘، فقال اعرابی : کیف یرفع ؟ فقال : الا ان ذھاب العلم ذھاب حملتہ ، ثلاث مرات‘‘ (۴) 

وقال الحافظ ابن حجر : ’’عند احمد عن ابن مسعود قال : ’’ھل تدرون ما ذھاب العلم ؟ ذھاب العلماء‘‘، وافاد حدیث ابی امامۃ الذی اشرت الیہ اولا وقت تحدیث النبی صلی اللہ علیہ وسلم بھذا الحدیث ، وفی حدیث ابی امامۃ من الفائدۃ الزائدۃ ان بقاء الکتب بعد رفع العلم بموت العلماء لایغنی من لیس بعالم شیئا، فان فی بقیتل : فسالہ اعرابی فقال : یانبی اللہ کیف یرفع العلم منا وبین اظھرنا المصاحف ، وقد تعلمنا ما فیھاوعلمنا ھا ابناء نا ونساء نا وخدمنا ، فرفع الیہ راسہ وھو مغضب ، فقال : وھذہ الیھود والنصاری بین اظھرھم المصاحف ، لم یتعلقوا منھا بحرف فیما جاء ھم بہ انبیاؤھم ۔ (۵)

وبہ قال ابو العباس : اخبرنا ابن اللتی ۔ انا ابو الوقت ، انا الداوودی ، السرخسی ، انا ابو عمران عیسی بن عمر السمرقندی ، انا ابو محمد عبداللہ بن عبد الرحمن السمرقندی ، قال: اخبرنا ابو عاصم ، انا ثور بن یزید ، حدثنی خالد بن معدان عن عبدالرحمن ، عن عمرو ، عن عرباض بن ساریۃ ، قال : صلی لنا رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم صلاۃ الفجر ثم و عظنا موعظۃ بلیغۃ ذرفت منھا العیون ووجلت منھا القلوب ۔فقال قائل یا رسول اللہ کانھا موعظۃ مودع فاو صنا فقال: ’’اوصیکم بتقوی اللہ والسمع والطاعۃ وان کان عبدا حبشیا فانہ من یعیش منکم بعدی فسیری اختلافا کثیرا فعلیکم بسنتی وسنۃ الخلفاء الراشدین المھدیین عضوا علیھا بالنواجذ وایاکم والمحدثات فان کل محدثۃ بدعۃ ۔‘‘

وبہ قال ابو محمد: حدثنا سلیمان بن حرب وابو النعمان عن حماد بن زید ، عن ایوب، عن ابی قلابۃ ، قال : قال ابن مسعود: ’’علیکم بالعلم قبل ان یقبض ، وقبضہ ان یذھب باصحابہ، علیکم باالعلم ، فان احدکم لایدری متی یفتقر الیہ او یفتقر الی ما عندہ، انکم ستجدون اقواما یز عمون انھم یدعونکم الی کتاب اللہ وقد نبذوہ وراء ظھورھم ، فعلیکم بالعلم، وایاکم والتبدع، وایاکم والتنطع، وایاکم والتعمق، وعلیکم بالعتیق۔‘‘


المصادر

۱۔ مجلہ ( الشریعہ ) الصادرۃ فی کجرانوالہ ، عدد اغسطس سنۃ ۲۰۰۸م ، ص ۶

۲ ۔ المرجع السابق ،ص ۸

۳۔ اخرجہ البخاری فی صحیحہ ،کتاب العلم، باب کیف یقبض العلم، وکتاب الاعتصام، باب ما یذکر فی ذم الرای وتکشف القیاس۔

ومسلم فی صحیحہ ،کتاب العلم، باب رفع العلم وقبضہ۔

وابوعیسی فی جامعہ، کتاب العلم ، باب ما ذھاب العلم ۔ وابن ماجہ فی سننہ، فی المقدمۃ، باب اجتناب الرای والقیاس۔

۴۔ الحافظ ابن حجر: فتح الباری ۱/۲۶۰

۵۔ المرجع السابق ،۳ ۱/۳۵۴


مشاہدات و تاثرات

جولائی تا ستمبر ۲۰۰۹ء

جلد ۲۰ ۔ شمارہ ۷ تا ۱۰

گر قبول افتد زہے عز و شرف
محمد عمار خان ناصر

ہم نے تمام عمر گزاری ہے اس طرح (۱)
مولانا محمد سرفراز خان صفدرؒ

ہم نے تمام عمر گزاری ہے اس طرح (۲)
مولانا محمد سرفراز خان صفدرؒ

حضرت شیخ الحدیثؒ کے اساتذہ کا اجمالی تعارف
مولانا محمد یوسف

امام اہل سنتؒ کے چند اساتذہ کا تذکرہ
مولانا قاضی نثار احمد

گکھڑ میں امام اہل سنت کے معمولات و مصروفیات
قاری حماد الزہراوی

امام اہل سنت رحمۃ اللہ علیہ کا تدریسی ذوق اور خدمات
مولانا عبد القدوس خان قارن

امام اہل سنت رحمہ اللہ کی قرآنی خدمات اور تفسیری ذوق
مولانا محمد یوسف

امام اہل سنت رحمہ اللہ کی تصانیف: ایک اجمالی تعارف
مولانا عبد الحق خان بشیر

امام اہل سنتؒ کی تصانیف اکابر علما کی نظر میں
حافظ عبد الرشید

حضرت شیخ الحدیث رحمہ اللہ اور دفاعِ حدیث
پروفیسر ڈاکٹر محمد اکرم ورک

منکرینِ حدیث کے شبہات کے جواب میں مولانا صفدر رحمہ اللہ کا اسلوبِ استدلال
ڈاکٹر محمد عبد اللہ صالح

’’مقام ابی حنیفہ‘‘ ۔ ایک علمی و تاریخی دستاویز
ڈاکٹر انوار احمد اعجاز

’’عیسائیت کا پس منظر‘‘ ۔ ایک مطالعہ
ڈاکٹر خواجہ حامد بن جمیل

حضرت شیخ الحدیث رحمہ اللہ کی تصانیف میں تصوف و سلوک کے بعض مباحث
حافظ محمد سلیمان

سنت اور بدعت ’’راہ سنت‘‘ کی روشنی میں
پروفیسر عبد الواحد سجاد

مولانا محمد سرفراز خان صفدر رحمہ اللہ کا انداز تحقیق
ڈاکٹر محفوظ احمد

مولانا محمد سرفراز خان صفدر کا اسلوب تحریر
نوید الحسن

امام اہل سنت رحمہ اللہ کا شعری ذوق
مولانا مومن خان عثمانی

حضرت والد محترمؒ سے وابستہ چند یادیں
مولانا ابوعمار زاہد الراشدی

شمع روشن بجھ گئی بزم سخن ماتم میں ہے
قاضی محمد رویس خان ایوبی

والد محترم کے ساتھ ایک ماہ جیل میں
مولانا عبد الحق خان بشیر

پیکر علم و تقویٰ
مولانا شیخ رشید الحق خان عابد

دو مثالی بھائی
مولانا حاجی محمد فیاض خان سواتی

حضرت والد محترمؒ کے آخری ایام
مولانا عزیز الرحمٰن خان شاہد

میرے بابا جان
ام عمران شہید

ذَہَبَ الَّذِیْنَ یُعَاشُ فِیْ اَکْنَافِہِمْ
اہلیہ قاری خبیب

اب جن کے دیکھنے کو اکھیاں ترستیاں ہیں
ام عمار راشدی

ابا جیؒ اور صوفی صاحبؒ ۔ شخصیت اور فکر و مزاج کے چند نمایاں نقوش
محمد عمار خان ناصر

قبولیت کا مقام
مولانا محمد عرباض خان سواتی

جامع الصفات شخصیت
مولانا قاری محمد ابوبکر صدیق

ایک استاد کے دو شاگرد
حافظ ممتاز الحسن خدامی

داداجان رحمہ اللہ ۔ چند یادیں، چند باتیں
حافظ سرفراز حسن خان حمزہ

کچھ یادیں، کچھ باتیں
حافظ محمد علم الدین خان ابوہریرہ

اٹھا سائبان شفقت
حافظ شمس الدین خان طلحہ

ملنے کے نہیں نایاب ہیں ہم
ام عفان خان

نانا جان علیہ الرحمہ کی چند یادیں
ام ریان ظہیر

میرے دادا جی رحمۃ اللہ علیہ
ام حذیفہ خان سواتی

میرے شفیق نانا جان
ام عدی خان سواتی

وہ سب ہیں چل بسے جنہیں عادت تھی مسکرانے کی
بنت قاری خبیب احمد عمر

بھولے گا نہیں ہم کو کبھی ان کا بچھڑنا
بنت حافظ محمد شفیق (۱)

دل سے نزدیک آنکھوں سے اوجھل
اخت داؤد نوید

مرنے والے مرتے ہیں لیکن فنا ہوتے نہیں
بنت حافظ محمد شفیق (۲)

شیخ الکل حضرت مولانا سرفراز صاحب صفدرؒ
مولانا مفتی محمد تقی عثمانی

نہ حسنش غایتے دارد نہ سعدی را سخن پایاں
مولانا مفتی محمد عیسی گورمانی

امام اہل سنت کی رحلت
مولانا محمد عیسٰی منصوری

امام اہلِ سنتؒ کے غیر معمولی اوصاف و کمالات
مولانا سعید احمد جلالپوری

حضرت مولانا محمد سرفراز خاں صفدرؒ کا سانحۂ ارتحال
مولانا مفتی محمد زاہد

علم و عمل کے سرفراز
مولانا سید عطاء المہیمن بخاری

اک شمع رہ گئی تھی سو وہ بھی خموش ہے
مولانا محمد جمال فیض آبادی

چند منتشر یادیں
مولانا محمد اسلم شیخوپوری

اک چراغ اور بجھا اور بڑھی تاریکی
پروفیسر غلام رسول عدیم

چند یادگار ملاقاتیں
پروفیسر ڈاکٹر علی اصغر چشتی

امام اہل سنتؒ: چند یادیں، چند تأثرات
حافظ نثار احمد الحسینی

ایک عہد ساز شخصیت
پروفیسر ڈاکٹر حافظ محمود اختر

پروانے جل رہے ہیں اور شمع بجھ گئی ہے
مولانا ظفر احمد قاسم

وما کان قیس ہلکہ ہلک واحد
حضرت مولانا عبد القیوم حقانی

ہم یتیم ہوگئے ہیں
مولانا محمد احمد لدھیانوی

میرے مہربان مولانا سرفراز خان صفدرؒ
ڈاکٹر حافظ محمد شریف

مثالی انسان
مولانا ملک عبد الواحد

وہ جسے دیکھ کر خدا یاد آئے
مولانا داؤد احمد میواتی

دو مثالی بھائی
مولانا گلزار احمد آزاد

امام اہل سنت رحمۃ اللہ علیہ چند یادیں
مولانا محمد نواز بلوچ

میرے مشفق اور مہربان مرشد
حاجی لقمان اللہ میر

مت سہل ہمیں جانو
ڈاکٹر فضل الرحمٰن

حضرت مولانا سرفراز صفدرؒ اور مفتی محمد جمیل خان شہیدؒ
مفتی خالد محمود

شیخ کاملؒ
مولانا محمد ایوب صفدر

اولئک آبائی فجئنی بمثلھم
مولانا عبد القیوم طاہر

چند یادیں اور تاثرات
مولانا مشتاق احمد

باتیں ان کی یاد رہیں گی
صوفی محمد عالم

یادوں کے گہرے نقوش
مولانا شمس الحق مشتاق

علمائے حق کے ترجمان
مولانا سید کفایت بخاری

دینی تعلق کی ابتدا تو ہے مگر انتہا نہیں
قاری محمد اظہر عثمان

امام اہل سنت مولانا سرفراز خان صفدر
مولانا الطاف الرحمٰن

امام اہل سنتؒ اور ان کا پیغام
حافظ محمد عامر جاوید

ایک شخص جو لاکھوں کو یتیم کر گیا
مولانا عبد اللطیف قاسم چلاسی

تفسیر میں امام اہل سنتؒ کی بصیرت : ایک دلچسپ خواب
ڈاکٹر محمد حبیب اللہ قاضی

امام اہل سنتؒ ۔ چند ملاقاتیں
حافظ تنویر احمد شریفی

مجھے بھی فخر ہے شاگردئ داغِؔ سخن داں کا
ادارہ

سماحۃ الشیخ سرفراز خان صفدر علیہ الرّحمۃ ۔ حیاتہ و جہودہ الدینیۃ العلمیّۃ
ڈاکٹر عبد الماجد ندیم

امام اہل السنۃ المحدث الکبیر ۔ محمد سرفراز خان صفدر رحمہ اللہ
ڈاکٹر عبد الرزاق اسکندر

العلامۃ المحدث الفقیہ الشیخ محمد سرفراز خان صفدر رحمہ اللہ
ڈاکٹر محمد اکرم ندوی

محدث العصر، الداعیۃ الکبیر الشیخ محمد سرفراز صفدر رحمہ اللہ
مولانا طارق جمیل

امام اہل سنتؒ کے عقائد و نظریات ۔ تحقیق اور اصول تحقیق کے آئینہ میں
مولانا عبد الحق خان بشیر

حضرت شیخ الحدیث رحمہ اللہ کا منہج فکر اور اس سے وابستگی کے معیارات اور حدود
محمد عمار خان ناصر

درس تفسیر حضرت مولانا سرفراز خان صفدر ۔ سورۂ بنی اسرائیل (آیات ۱ تا ۲۲)
محمد عمار خان ناصر

حضرات شیخین کی چند مجالس کا تذکرہ
سید مشتاق علی شاہ

خطبہ جمعۃ المبارک حضرت مولانا سرفراز خان صفدرؒ
مولانا محمد سرفراز خان صفدرؒ

امام اہل سنت رحمہ اللہ کے دلچسپ واقعات
مولانا محمد فاروق جالندھری

حفظ قرآن اور دورۂ حدیث مکمل کرنے والے طلبہ سے امام اہل سنتؒ کا ایک ایمان افروز تربیتی خطاب
مولانا محمد سرفراز خان صفدرؒ

تعلیم سے متعلق ایک سوال نامہ کا جواب
مولانا محمد سرفراز خان صفدرؒ

امام اہل سنتؒ کی فارسی تحریر کا ایک نمونہ
مولانا محمد سرفراز خان صفدرؒ

امام اہل سنتؒ کے منتخب مکاتیب
مولانا محمد سرفراز خان صفدرؒ

ہمارے پیر و مرشد
محمد جمیل خان

امام اہل سنت کے چند واقعات
سید انصار اللہ شیرازی

تعزیتی پیغامات اور تاثرات ۔ بسلسلہ وفات حضرت مولانا سرفراز خان صفدرؒ
ادارہ

حضرت شیخ الحدیثؒ کی وفات پر اظہار تعزیت کرنے والے مذہبی و سیاسی راہ نماؤں کے اسمائے گرامی
ادارہ

مسئلہ حیات النبی صلی اللہ علیہ وسلم اور متوازن رویہ
مولانا ابوعمار زاہد الراشدی

امام اہل سنتؒ کے علمی مقام اور خدمات کے بارے میں حضرت مولانا محمد حسین نیلویؒ کی رائے گرامی
ادارہ

امام اہل سنت رحمہ اللہ کا دینی فکر ۔ چند منتخب افادات
مولانا محمد سرفراز خان صفدرؒ

حضرت مولانا سرفراز خان صفدرؒ ۔ شجرۂ نسب سلسلہ نقشبندیہ مجددیہ
ادارہ

سلسلہ نقشبندیہ میں حضرت شیخ الحدیثؒ کے خلفاء
ادارہ

آہ! اب رخصت ہوا وہ اہل سنت کا امام
محمد عمار خان ناصر

اے سرفراز صفدر!
مولوی اسامہ سرسری

ان کو ڈھونڈے گا اب تو کہاں راشدی
مولانا ابوعمار زاہد الراشدی

امام اہل سنت قدس سرہ
مولانا غلام مصطفٰی قاسمی

حضرت مولانا سرفراز خان صفدرؒ کی یاد میں
مولانا منظور احمد نعمانی

مضی البحران صوفی و صفدر
حافظ فضل الہادی

علم کی دنیا میں تو ہے سربلند و سرفراز
ادارہ

قصیدۃ الترحیب
ادارہ

خطیب حق بیان و راست بازے
محمد رمضان راتھر