علم و عمل کے سرفراز

مولانا سید عطاء المہیمن بخاری

دیوبند ایک تحریک کا نام ہے اور تحریک اس وقت تک قائم رہے گی جب تک حق والے موجود ہیں ان شاء اللہ۔ کسی کے اٹھ جانے سے تحریکیں ختم نہیں ہوتیں اورنہ دم توڑتی ہیں۔ ہاں نشیب وفراز ضرور آتے ہیں ۔ امتِ محمدیہ صلی اللہ علیہ وسلم کو اللہ تعالیٰ نے صدمات ہی عطا فرمائے ہیں۔ یہ صدموں والی امت ہے۔سب سے پہلاصدمہ اس امت کو نبی پاک صلی اللہ علیہ وسلم کا اِس دنیا سے اُس دنیا میں منتقل ہونے سے ملا۔ اگر یہ حق کی تحریک اور یہ دین ختم ہونا ہوتا تو اُسی دن ختم ہو جاتا۔ صدمہ ضرور ہوا لیکن حق کا پیغام ختم نہیں ہوا۔اس پیغام کو سنبھالنے والے انبیاء علیہم الصلوۃ والتسلیمات کے بعد پانچ لاکھ نفوسِ قدسیہ دنیا میں پھیل گئے اور اللہ کی اس بات کو سچا ثابت کرنے کے لیے ایک ایک نے اپنا دم خم لگا کر اس بات کو علی الاعلان دنیا تک پہنچایا۔

جب میں اس میدان میں نکلا تو میں نے سب سے پہلے حیات انبیا کے موضوع پرحضرت مولانا سرفراز صاحب رحمۃ اللہ علیہ کی کتاب ہی پڑھی اور پھر اور بہت سی کتابوں کا مطالعہ کیا۔ان کا فیض تاحال جاری ہے اور جاری رہے گا ۔ان شاء اللہ۔

حضرت مولانا سرفراز خان صفدرؒ سے میری کوئی زیادہ ملاقاتیں نہیں ہیں۔ سب سے پہلی ملاقات میں مدرسہ نصرۃ العلوم میں مولانا زاہد الراشدی کے ساتھ حاضر ہوا۔ پہلا تأثر جو میرے دل پر دونوں بھائیوں (حضرت مولانا سرفراز خان صفدر اور حضرت مولانا صوفی عبدالحمید سواتی) کو اکٹھے بیٹھے دیکھ کر قائم ہوا، یہ تھا کہ دل سے ایک رشک آمیز ہوک نکلی کہ اے اللہ سب بھائیوں کو ایسی محبت دے دے اور سب کے بھائی ایسے ہوجائیں ۔دونوں عالم ،دونوں فقیہ ،دونوں محدّث ، دونوں مفسّراور دونوں اللہ والے۔ دوسرا تاثریہ کہ دونوں سادہ، کوئی کرّ وفر نہیں اور دونوں حضرات نے مجھے اس شفقت سے گلے لگایا۔ سچی بات ہے میرا دل موہ لیا۔ محبت کا مارا ہوا ہوں۔ جو محبت کرتا ہے، ہم اس کے ساتھ ہیں ،اور دونوں حضرات نے مجھے ہد یہ دیا ۔ اِس پر ایک بات سناتا ہوں۔ حضرت مولاناسید محمد یوسف بنوریؒ ملتان تشریف لائے۔ ابا جی بیمار تھے۔ آکر مصافحہ معانقہ کیا۔ ابا جی نے سر سے پاؤں تک دیکھنا شروع کیا تومولانا یوسف بنوری سمجھے کہ شاید مجھے پہچانا نہیں۔ انہوں نے کہا حضرت میں محمد یوسف بنوری ہو ں۔ فرمایا نہیں۔ پھر اوپر سے نیچے تک دیکھا۔ حضرت بنوری نے پھر فرمایا، حضرت میں محمد یوسف بنوری کراچی سے آیا ہوں۔ فرمایا نہیں۔ تیسری بار پھر ایسا ہی معاملہ ہوا۔ حضرت بنوری نے فرمایا، حضرت میں محمد یوسف بنوری ہو ں۔ اباجی نے فرمایا، نہیں، انور شاہ۔کہ یوسف بنوری ،انورشاہ کی نشانی ہے۔ توان دونوں بزرگوں نے وہ ہدیے مجھے نہیں دیے بلکہ عطاء اللہ شاہ بخاری رحمۃ اللہ علیہ کو دیے۔ میری کیا حیثیت اور میری کیا پہچان ہے۔ یہ میری پہلی ملاقات تھی۔ 

آخری ملاقات وفات سے ایک ہفتہ پہلے ہوئی۔میں حاضر ہوا،عجیب تماشا ہے۔ حضرت کے ہوش ،ہواس ،پہچان ہر چیز بالکل قائم تھی۔ میں نے عرض کیا السلام علیکم ورحمۃ اللہ وبرکاتہ !عطاء المہیمن حاضر ہوا ہوں۔ واللہ العظیم کھینچ کر میرا ہاتھ چوم لیا۔ یہ ساتھی گواہ ہیں جوساتھ تھے۔حضرت نے میرا ہاتھ چوما۔ سچی بات ہے طبیعت پربہت اثر ہوا۔ میں نے کچھ ہدیہ پیش کیا۔ حضرت نے وہ بھی محبت سے جیب میں ڈال لیا۔اچانک کپکپی طاری ہوگئی کہ میں کیا، میرا ہاتھ کیا اور معاً تنبہ ہوا کہ اوہ بے وقوف! تیرا نہیں، عطاء اللہ شاہ بخاری رحمۃ اللہ علیہ کا احترام ہے۔ جب ۱۹۳۰ء میں انجمن خدّام الدّین کے جلسے میں حضرت انور شاہ رحمۃ اللہ علیہ نے پانچ سو علما کی موجودگی میں امیر شریعت کا خطاب دیتے ہوئے ابا جی کے ہاتھ پر بیعت کی۔ بھائی جان مولانا سید ابوذر بخاری رحمۃ اللہ علیہ نے پوچھا ’’ابّا جی تُسی انور شاہ صاحب نُوں بیعت کرلیا؟‘‘ اباجی نے فرمایا ’’حافظ جی! تم بے وقوف ہو۔ میں کوئی پگلا تھا کہ انور شاہ کا ہاتھ اپنے ہاتھ میں لے لیتا۔ جب حضرت انور شاہ صاحب نے بیعت کے لیے اپنے ہاتھ بڑھائے تو میں نے جلدی سے اپنے ہاتھ انور شاہ صاحب کے ہاتھوں میں دے دیے۔ انہوں نے کہاں بیعت کی، میں نے انور شاہ کی بیعت کی‘‘۔

جس رات حضرت کا انتقال ہوتاہے،سحر کے وقت مجھے خواب آیا کہ مجھ پر کسی نے حملہ کیا اور میرا بازو کاٹ دیا اور صبح مجھے خبر ملی کہ مولانا سرفراز خان صاحب کا انتقال ہوگیاہے۔ 

حضرت مولانا سرفراز خان صفدر صاحب رحمۃ اللہ علیہ کو اللہ تبارک وتعالیٰ نے جونعمتیں عطا فرمائیں تھیں ، اُن میں دو بہت نمایاں تھیں۔ قرآن کہتاہے: انما اموالکم واولادکم فتنہ۔ مال اور اولاد آزمایش ہیں ۔ میرے اللہ نے اپنے اس بند ے کو ان دونوں آزمایشوں میں کامیاب کردیا ۔ مال سے محبت کی، نہ اولاد گمراہ ہوئی ۔اولاد زندگی میں عالم بن گئی ۔ اللہ تبارک وتعالیٰ نے مقصد تخلیق اور مقصد حیات کو سمجھ کر اس پر عمل پیرا ہونے کی امتِ محمدیہ صلی اللہ علیہ وسلم کی جو ڈیوٹی لگائی، حضرت مولانا سرفراز خان صفدررحمۃ اللہ علیہ اس ڈیوٹی کوانجام دیتے ہوئے دنیا سے تشریف لے گئے۔ اللہ نے سرفراز کو فوزاً عظیما سے نواز کر اپنے پاس بلایا۔ ومن یطع اللہ ورسولہ فقد فاز فوزاً عظیما

غلط تعریف نہیں کررہا، حقیقت میں دل کی آواز بتارہا ہو ں کہ میرے اللہ نے اپنے اس بند ے سرفراز کو کامیابی کی نعمتوں سے سرفراز فرمایا۔مال سے محبت نہیں کی ۔اللہ کی رضا کے لیے اس مخلوق سے محبت کی اور دین کی تعلیم ودعوت اوردین دشمنوں کی سرکوبی میں زندگی تمام کردی۔وہ دنیا وآخرت میں کامیاب ہوگئے۔

یا ایھا الذین اٰمنوا اتقوا اللہ وقولوا قولاً سد یدا یصلح لکم اعمالکم ویغفر لکم ذنوبکم۔

ساری زندگی سچ بولا، اللہ کی توحید بیان کی، نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم کی ختم نبوت ورسالت اور عقائدِ صحیحہ بیان فرمائے۔ اللہ تبارک وتعالیٰ نے مصائب و پریشانیوں کو اچھے احوال میں تبدیل کر کے انہیں پاکستان کا امام اہل سنت بنادیا ۔ اور کتنے ہی لوگ مغفرت مانگنے والے پیچھے چھوڑ گئے۔ہزار ہا کی تعداد میں علما، طلبہ، فضلا، احبا، اصدقا ان کے پیچھے سب دعاے مغفرت کرنے والے رہ گئے۔ حضرت مولانا سرفراز خان صفدر ،اللہ تعالیٰ کی نعمتوں اور نشانیوں میں سے ایک تھے۔آج ہم اس نعمت سے محروم ہو گئے ۔ حق تعالیٰ،اُن کے حسنات کو قبول فرمائے۔اُن کا فیض جاری رہے، اُن کا مشن زندہ رہے اور انہیں جوارِرحمت میں جگہ عطا فرمائے۔ (اٰمین) 

(۸ جون ۲۰۰۹ء کو گکھڑ منڈی میں امام اہل سنت سیمینار سے خطاب)

مشاہدات و تاثرات

جولائی تا ستمبر ۲۰۰۹ء

جلد ۲۰ ۔ شمارہ ۷ تا ۱۰

گر قبول افتد زہے عز و شرف
محمد عمار خان ناصر

ہم نے تمام عمر گزاری ہے اس طرح (۱)
مولانا محمد سرفراز خان صفدرؒ

ہم نے تمام عمر گزاری ہے اس طرح (۲)
مولانا محمد سرفراز خان صفدرؒ

حضرت شیخ الحدیثؒ کے اساتذہ کا اجمالی تعارف
مولانا محمد یوسف

امام اہل سنتؒ کے چند اساتذہ کا تذکرہ
مولانا قاضی نثار احمد

گکھڑ میں امام اہل سنت کے معمولات و مصروفیات
قاری حماد الزہراوی

امام اہل سنت رحمۃ اللہ علیہ کا تدریسی ذوق اور خدمات
مولانا عبد القدوس خان قارن

امام اہل سنت رحمہ اللہ کی قرآنی خدمات اور تفسیری ذوق
مولانا محمد یوسف

امام اہل سنت رحمہ اللہ کی تصانیف: ایک اجمالی تعارف
مولانا عبد الحق خان بشیر

امام اہل سنتؒ کی تصانیف اکابر علما کی نظر میں
حافظ عبد الرشید

حضرت شیخ الحدیث رحمہ اللہ اور دفاعِ حدیث
پروفیسر ڈاکٹر محمد اکرم ورک

منکرینِ حدیث کے شبہات کے جواب میں مولانا صفدر رحمہ اللہ کا اسلوبِ استدلال
ڈاکٹر محمد عبد اللہ صالح

’’مقام ابی حنیفہ‘‘ ۔ ایک علمی و تاریخی دستاویز
ڈاکٹر انوار احمد اعجاز

’’عیسائیت کا پس منظر‘‘ ۔ ایک مطالعہ
ڈاکٹر خواجہ حامد بن جمیل

حضرت شیخ الحدیث رحمہ اللہ کی تصانیف میں تصوف و سلوک کے بعض مباحث
حافظ محمد سلیمان

سنت اور بدعت ’’راہ سنت‘‘ کی روشنی میں
پروفیسر عبد الواحد سجاد

مولانا محمد سرفراز خان صفدر رحمہ اللہ کا انداز تحقیق
ڈاکٹر محفوظ احمد

مولانا محمد سرفراز خان صفدر کا اسلوب تحریر
نوید الحسن

امام اہل سنت رحمہ اللہ کا شعری ذوق
مولانا مومن خان عثمانی

حضرت والد محترمؒ سے وابستہ چند یادیں
مولانا ابوعمار زاہد الراشدی

شمع روشن بجھ گئی بزم سخن ماتم میں ہے
قاضی محمد رویس خان ایوبی

والد محترم کے ساتھ ایک ماہ جیل میں
مولانا عبد الحق خان بشیر

پیکر علم و تقویٰ
مولانا شیخ رشید الحق خان عابد

دو مثالی بھائی
مولانا حاجی محمد فیاض خان سواتی

حضرت والد محترمؒ کے آخری ایام
مولانا عزیز الرحمٰن خان شاہد

میرے بابا جان
ام عمران شہید

ذَہَبَ الَّذِیْنَ یُعَاشُ فِیْ اَکْنَافِہِمْ
اہلیہ قاری خبیب

اب جن کے دیکھنے کو اکھیاں ترستیاں ہیں
ام عمار راشدی

ابا جیؒ اور صوفی صاحبؒ ۔ شخصیت اور فکر و مزاج کے چند نمایاں نقوش
محمد عمار خان ناصر

قبولیت کا مقام
مولانا محمد عرباض خان سواتی

جامع الصفات شخصیت
مولانا قاری محمد ابوبکر صدیق

ایک استاد کے دو شاگرد
حافظ ممتاز الحسن خدامی

داداجان رحمہ اللہ ۔ چند یادیں، چند باتیں
حافظ سرفراز حسن خان حمزہ

کچھ یادیں، کچھ باتیں
حافظ محمد علم الدین خان ابوہریرہ

اٹھا سائبان شفقت
حافظ شمس الدین خان طلحہ

ملنے کے نہیں نایاب ہیں ہم
ام عفان خان

نانا جان علیہ الرحمہ کی چند یادیں
ام ریان ظہیر

میرے دادا جی رحمۃ اللہ علیہ
ام حذیفہ خان سواتی

میرے شفیق نانا جان
ام عدی خان سواتی

وہ سب ہیں چل بسے جنہیں عادت تھی مسکرانے کی
بنت قاری خبیب احمد عمر

بھولے گا نہیں ہم کو کبھی ان کا بچھڑنا
بنت حافظ محمد شفیق (۱)

دل سے نزدیک آنکھوں سے اوجھل
اخت داؤد نوید

مرنے والے مرتے ہیں لیکن فنا ہوتے نہیں
بنت حافظ محمد شفیق (۲)

شیخ الکل حضرت مولانا سرفراز صاحب صفدرؒ
مولانا مفتی محمد تقی عثمانی

نہ حسنش غایتے دارد نہ سعدی را سخن پایاں
مولانا مفتی محمد عیسی گورمانی

امام اہل سنت کی رحلت
مولانا محمد عیسٰی منصوری

امام اہلِ سنتؒ کے غیر معمولی اوصاف و کمالات
مولانا سعید احمد جلالپوری

حضرت مولانا محمد سرفراز خاں صفدرؒ کا سانحۂ ارتحال
مولانا مفتی محمد زاہد

علم و عمل کے سرفراز
مولانا سید عطاء المہیمن بخاری

اک شمع رہ گئی تھی سو وہ بھی خموش ہے
مولانا محمد جمال فیض آبادی

چند منتشر یادیں
مولانا محمد اسلم شیخوپوری

اک چراغ اور بجھا اور بڑھی تاریکی
پروفیسر غلام رسول عدیم

چند یادگار ملاقاتیں
پروفیسر ڈاکٹر علی اصغر چشتی

امام اہل سنتؒ: چند یادیں، چند تأثرات
حافظ نثار احمد الحسینی

ایک عہد ساز شخصیت
پروفیسر ڈاکٹر حافظ محمود اختر

پروانے جل رہے ہیں اور شمع بجھ گئی ہے
مولانا ظفر احمد قاسم

وما کان قیس ہلکہ ہلک واحد
حضرت مولانا عبد القیوم حقانی

ہم یتیم ہوگئے ہیں
مولانا محمد احمد لدھیانوی

میرے مہربان مولانا سرفراز خان صفدرؒ
ڈاکٹر حافظ محمد شریف

مثالی انسان
مولانا ملک عبد الواحد

وہ جسے دیکھ کر خدا یاد آئے
مولانا داؤد احمد میواتی

دو مثالی بھائی
مولانا گلزار احمد آزاد

امام اہل سنت رحمۃ اللہ علیہ چند یادیں
مولانا محمد نواز بلوچ

میرے مشفق اور مہربان مرشد
حاجی لقمان اللہ میر

مت سہل ہمیں جانو
ڈاکٹر فضل الرحمٰن

حضرت مولانا سرفراز صفدرؒ اور مفتی محمد جمیل خان شہیدؒ
مفتی خالد محمود

شیخ کاملؒ
مولانا محمد ایوب صفدر

اولئک آبائی فجئنی بمثلھم
مولانا عبد القیوم طاہر

چند یادیں اور تاثرات
مولانا مشتاق احمد

باتیں ان کی یاد رہیں گی
صوفی محمد عالم

یادوں کے گہرے نقوش
مولانا شمس الحق مشتاق

علمائے حق کے ترجمان
مولانا سید کفایت بخاری

دینی تعلق کی ابتدا تو ہے مگر انتہا نہیں
قاری محمد اظہر عثمان

امام اہل سنت مولانا سرفراز خان صفدر
مولانا الطاف الرحمٰن

امام اہل سنتؒ اور ان کا پیغام
حافظ محمد عامر جاوید

ایک شخص جو لاکھوں کو یتیم کر گیا
مولانا عبد اللطیف قاسم چلاسی

تفسیر میں امام اہل سنتؒ کی بصیرت : ایک دلچسپ خواب
ڈاکٹر محمد حبیب اللہ قاضی

امام اہل سنتؒ ۔ چند ملاقاتیں
حافظ تنویر احمد شریفی

مجھے بھی فخر ہے شاگردئ داغِؔ سخن داں کا
ادارہ

سماحۃ الشیخ سرفراز خان صفدر علیہ الرّحمۃ ۔ حیاتہ و جہودہ الدینیۃ العلمیّۃ
ڈاکٹر عبد الماجد ندیم

امام اہل السنۃ المحدث الکبیر ۔ محمد سرفراز خان صفدر رحمہ اللہ
ڈاکٹر عبد الرزاق اسکندر

العلامۃ المحدث الفقیہ الشیخ محمد سرفراز خان صفدر رحمہ اللہ
ڈاکٹر محمد اکرم ندوی

محدث العصر، الداعیۃ الکبیر الشیخ محمد سرفراز صفدر رحمہ اللہ
مولانا طارق جمیل

امام اہل سنتؒ کے عقائد و نظریات ۔ تحقیق اور اصول تحقیق کے آئینہ میں
مولانا عبد الحق خان بشیر

حضرت شیخ الحدیث رحمہ اللہ کا منہج فکر اور اس سے وابستگی کے معیارات اور حدود
محمد عمار خان ناصر

درس تفسیر حضرت مولانا سرفراز خان صفدر ۔ سورۂ بنی اسرائیل (آیات ۱ تا ۲۲)
محمد عمار خان ناصر

حضرات شیخین کی چند مجالس کا تذکرہ
سید مشتاق علی شاہ

خطبہ جمعۃ المبارک حضرت مولانا سرفراز خان صفدرؒ
مولانا محمد سرفراز خان صفدرؒ

امام اہل سنت رحمہ اللہ کے دلچسپ واقعات
مولانا محمد فاروق جالندھری

حفظ قرآن اور دورۂ حدیث مکمل کرنے والے طلبہ سے امام اہل سنتؒ کا ایک ایمان افروز تربیتی خطاب
مولانا محمد سرفراز خان صفدرؒ

تعلیم سے متعلق ایک سوال نامہ کا جواب
مولانا محمد سرفراز خان صفدرؒ

امام اہل سنتؒ کی فارسی تحریر کا ایک نمونہ
مولانا محمد سرفراز خان صفدرؒ

امام اہل سنتؒ کے منتخب مکاتیب
مولانا محمد سرفراز خان صفدرؒ

ہمارے پیر و مرشد
محمد جمیل خان

امام اہل سنت کے چند واقعات
سید انصار اللہ شیرازی

تعزیتی پیغامات اور تاثرات ۔ بسلسلہ وفات حضرت مولانا سرفراز خان صفدرؒ
ادارہ

حضرت شیخ الحدیثؒ کی وفات پر اظہار تعزیت کرنے والے مذہبی و سیاسی راہ نماؤں کے اسمائے گرامی
ادارہ

مسئلہ حیات النبی صلی اللہ علیہ وسلم اور متوازن رویہ
مولانا ابوعمار زاہد الراشدی

امام اہل سنتؒ کے علمی مقام اور خدمات کے بارے میں حضرت مولانا محمد حسین نیلویؒ کی رائے گرامی
ادارہ

امام اہل سنت رحمہ اللہ کا دینی فکر ۔ چند منتخب افادات
مولانا محمد سرفراز خان صفدرؒ

حضرت مولانا سرفراز خان صفدرؒ ۔ شجرۂ نسب سلسلہ نقشبندیہ مجددیہ
ادارہ

سلسلہ نقشبندیہ میں حضرت شیخ الحدیثؒ کے خلفاء
ادارہ

آہ! اب رخصت ہوا وہ اہل سنت کا امام
محمد عمار خان ناصر

اے سرفراز صفدر!
مولوی اسامہ سرسری

ان کو ڈھونڈے گا اب تو کہاں راشدی
مولانا ابوعمار زاہد الراشدی

امام اہل سنت قدس سرہ
مولانا غلام مصطفٰی قاسمی

حضرت مولانا سرفراز خان صفدرؒ کی یاد میں
مولانا منظور احمد نعمانی

مضی البحران صوفی و صفدر
حافظ فضل الہادی

علم کی دنیا میں تو ہے سربلند و سرفراز
ادارہ

قصیدۃ الترحیب
ادارہ

خطیب حق بیان و راست بازے
محمد رمضان راتھر